بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 13 نومبر 2019 ء

بینات

 
 

ٹریفک قوانین کی پابندی ۔۔۔۔۔۔ شرعی حیثیت!

ٹریفک قوانین کی پابندی ۔۔۔۔۔۔ شرعی حیثیت!


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
میں خود ایک مدرسہ کا طالب علم ہوں۔ مجھے یہ چیز بہت پریشان کرتی ہے جب اچھے خاصے مدرسے کے طلبہ اور اساتذہ روڈ پر بڑی دلیری سے ٹریفک قوانین توڑتے ہیں اور اسے غلط بھی نہیں سمجھتے۔ رانگ وے (ون وے پر اُلٹا چلنا) سگنل کی خلاف ورزی کرنا، پارکنگ اس طرح کرنا کہ دوسرے کو پریشانی ہو وغیرہ، یہ وہ مسائل ہیں جن سے معاشرے میں جنگل کا ساماحول بنتا جارہا ہے۔ ظاہری سنت کا لباس پہن کر اور داڑھی رکھ کر یہ طلبہ اور اساتذہ خود کو شہری قوانین سے بالاتر سمجھتے ہیں۔ ان کو سمجھانے کی کوشش کی جائے تو اُلجھتے ہیں اور کہتے ہیں کہ عام آدمی جب کرتا ہے تو اسے پہلے روکو۔ میں ایک مدرسہ کا طالب علم ہونے کی حیثیت سے سوچتا ہوں کہ مولانا حضرات کو عام آدمی کے لیے نمونہ ہونا چاہیے اور مثال بننا چاہیے۔ کیا دینی مدارس میں پڑھنے والے طلبہ اور خاص کر اساتذہ کو عام شہری قوانین کی تعلیم دینے کے لیے کوئی شعبہ ہے؟ اور اگر ہے تو پھر دینی مدارس کے طلبہ اور اساتذہ کے افعال میں یہ تعلیم کیوں نظر نہیں آتی؟                                         مستفتی:قاسم عبد الحمید

الجواب حامداً ومصلیاً

دینی مدارس کے طلبہ ہوں یا اساتذہ یا پھر عام شہری، وہ شرعاً ٹریفک قوانین کے پابند ہیں۔ یہ پابندی دو بنیادوں پر لازمی ہے:
۱:… ٹریفک قوانین ملک کے جائز انتظامی قوانین کا حصہ ہیں جو عوام کی فلاح وبہبود پر مبنی ہیں، ایسے قوانین میں رعایا کو شریعت نے تاکید کے ساتھ پابندی کا حکم دیاہے۔
۲:… ٹریفک لائسنس کے اجراء میں جو آداب وقوانین بتائے جاتے ہیں اور لائسنس ہولڈر کو ان کے التزام کی تعلیم دی جاتی ہے، جسے قبول کرنے کے بعد لائسنس کا اجراء ہوتا ہے۔ یہ درحقیقت ٹریفک قوانین کی پابندی کا عہد وپیمان ہوتاہے۔ ہر مسلمان بحیثیت مسلمان ہرجائز عہد وپیمان کو پورا کرنے کا پابند ہوتا ہے، بالخصوص حکومتِ وقت یا اس کے اداروں کے ساتھ عہد وپیمان کا پابند ہوتا ہے۔
جو ڈرائیور حضرات ان قوانین اور معاہدوں کی پابندی کرتے ہیں، وہ اچھے مسلمان اور بہترین شہری کا مصداق ہیں۔ اگر کوئی غلط کام کرتاہے یا خلافِ قانون اقدام کرتا ہے تو اس کی غلطی اور قانون کی خلاف ورزی کسی اور کے لیے جواز کی دلیل نہیں ہے۔ علماء وطلبہ کو اس امر کا بطور خاص لحاظ رکھنا چاہیے۔ دینی تعلیم کے ضمن میں حکامِ وقت کی جائز امور میں فرمانبرداری اور عہد وپیمان کی پاسداری کی نصوص کثرت کے ساتھ موجود ہیں، جنہیں مستقل شعبے کے قوانین وآداب سے تعبیر کیا جاسکتاہے، جن علماء وطلباء کو ان آداب کا استحضار نہ ہو، وہ ان حوالہ جات کو ملاحظہ فرمالیں:
۱:- ’’عن أنسؓ، أن النبي صلی اللّٰہ علیہ وسلم قال لأبي ذرؓ: اسمع وأطع ولو لعبد حبشي کأن رأسہٗ زبیبۃ. ہٰذا حدیث متفق علٰی صحتہٖ، أخرجہٗ محمد عن مسدد عن یحیٰی عن شعبۃ، وأخرجہٗ مسلم من طریق أبي ذرؓ، قال: أوصاني خلیلي أن أسمع وأطیع وإن کان عبدا مجدع الأطراف۔‘‘ (شرح السنۃ للبغوی، کتاب الامارۃ والقضاء، وجوب طاعۃ الوالی، ج:۱۰، ص:۴۲، ط: المکتب الاسلامی، دمشق، بیروت)
۲:-وروی عن یحیی بن حصین، عن جدتہٖ أم الحصین، أنہا سمعت رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم یخطب فی حجۃ الوداع، وہو یقول: ولو استعمل علیکم عبد یقودکم بکتاب اللّٰہ اسمعوا لہٗ وأطیعوا۔‘‘ (شرح السنۃ للبغوی، کتاب الامارۃ والقضاء، وجوب طاعۃ الوالی، ج:۱۰،ص:۴۲، ط: المکتب الاسلامی، دمشق ، بیروت)
۳:-عن عبد اللّٰہ، عن النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم، قال: السمع والطاعۃ علی المرء  المسلم فیما أحب وکرہ ما لم یؤمر بمعصیۃ، فإذا أمر بمعصیۃ، فلا سمع ولا طاعۃ۔‘‘ (شرح السنۃ للبغوی، کتاب الامارۃ والقضاء، وجوب طاعۃ الوالی، ج:۱۰، ص:۴۳، ط: المکتب الاسلامی، دمشق ، بیروت)
۴:- ’’ المسلمون عند شروطہم۔‘‘ (الدر المختار، باب المستأمن أي الطالب للأمان، ج:۴، ص:۱۶۶، ط: دارالفکر، بیروت)
۵:- ’’لا دین لمن لا عہد لہٗ۔‘‘ (شعب الایمان للبیہقی، ج: ۴، ص:۷۸ ، رقم الحدیث: ۴۰۴۵، ط: دارالکتب العلمیۃ ، بیروت)
                 الجواب صحیح                          الجواب صحیح                          الجواب صحیح                                                          کتبہ
        ابوبکر سعید الرحمن                      محمد انعام الحق                 محمد شفیق عارف                                         محمد زبیر خان
             الجواب صحیح               الجواب صحیح                                                                                                                         متخصصِ فقہِ اسلامی
               شعیب عالم                    رفیق احمد                                                                                                                جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے