بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 جمادى الاخرى 1443ھ 18 جنوری 2022 ء

بینات

 
 

مکاتیب حضرت مولانا میاں سید اصغر حسین رحمہ اللہ  بنام حضرت بنوری رحمہ اللہ 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوریؒ


مکاتیب حضرت مولانا میاں سید اصغر حسین رحمہ اللہ 

بنام حضرت بنوری رحمہ اللہ 

 

حضرت مولانا سید اصغر حسین صاحبؒ  (1)  بنام حضرت علامہ سید محمد یوسف بنوریؒ

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
۷۸۶
بخدمتِ عالی کرم فرمائے بندہ! 
السلام علیکم ورحمۃ اللہ!

بعد عرضِ سلام مسنون، بالکل صحیح خیال فرمائیں کہ ایک شب کو خیال کر رہا تھا کہ عرصہ دراز سے کچھ خیر خیریت معلوم نہیں ہوئی، خدا جانے (آپ) کہاں اور کس حال میں ہوں گے؟ دوسرے روز آپ کا عنایت نامہ موصول ہوا، شکرِ خدا کیا۔
الحمدللہ کہ بلا عرضِ احقر خود آپ بھی سمجھے ہوئے ہیں کہ یہ مشاغل (2)بالکل بعید از علم ہیں، اور آپ کا منصب کچھ اور ہے۔ یہ ہوا، تعویذ گنڈا ہوا،(3)وعظ گوئی ہوئی،(4)یہ سب عالم نما جاہلوں کے مناسب ہیں۔ حق تعالیٰ آپ کو مشغلۂ علمی میں رکھ کر لذتِ علمی عطا فرمائیں، اور کوئی صورت پیدا فرمائیں۔ 
اس طرف (دیوبند) کے ارادے کی خبر موجبِ مزید شوقِ ملاقات ہوئی، حق تعالیٰ ارادہ پورا فرماویں۔ اگرچہ یہ ایک صورتِ امتحان ہی ہے، واللہ اعلم کیا پیش آئے؟ تاہم دنیا بامید قائم! حق تعالیٰ ملاقات اور پہلے ’’مافات‘‘ کی مکافات کرا دیں۔ 
اکثر حضرات خطوط میں کبھی واقعی اور کبھی رسمی طور سے لکھا کرتے ہیں کہ: ’’کسی چیز کی ضرورت ہو تو لاؤں؟‘‘ مگر کبھی کوئی ضروری چیز خیال ہی میں نہیں آتی۔ آپ کے خط میں یہ پُرخلوص جملہ بھی تھا، اس کے بعد قالینی جا(ئے) نمازوں کا ذکر پڑھ کر خیال ہوا کہ اُون کی چیزیں وہاں بہت اچھی ملتی ہوں گی۔ میرا ارادہ عرصہ سے ایک نہایت نرم اور بہت گرم اُونی چادر دُہری خریدنے کا ہے، مولوی عطا محمد ہزارے سے ایک لائے، مگر بہت موٹی تھی، فروخت کردی۔ 
مولانا مرتضیٰ حسن صاحب(5)امرتسر ابھی جانے والے تھے، پھر جانا ملتوی ہوگیا، ان سے ذکر کیا تھا، انہوں نے جناب مہتمم صاحب(6)سے اتفاقیہ ذکر کردیا تو انہوں نے فوراً از راہِ سعادت مندی اپنی قیمتی چادر بدن سے اُتار کر دے دی، اور واقعی خلوص سے دے دی، لیکن میں نے تھوڑی دیر کے بعد دعا اور شکریہ سے واپس کردی۔ 
بہرحال ایک دُہری، نرم وگرم، باریک اُون کی سیدھی اور بغیر زینت وتکلف کی، اور وزن میں ہلکی، عمدہ چادر کا متلاشی ہوں، جو زندگی میں میرے کام آئے اور پھر میراث میں تقسیم ہو کر موجبِ ثواب بنے، اور طول وعرض میں بھی کوتاہ نہ ہو، بالکل سپید، یا سبز، وبالکل سیاہ نہ ہو، بادامی یا کشمشی یا خاکی ہو، سلی رنگ کی ہو۔قیمت جو کچھ ہوگی، فوراً ادا کردی جائے گی، اگر دو چار روپیہ کی چیز ہوتی تو قیمت کا ذکر نہ کرتا۔
آپ کو میری تحریر سے ’’نفحۃ الیمن‘‘ کا قصہ یاد آگیا ہوگا: ’’فقال: إن مسخ اللہ القاضيَ حماراً قضيتُ حاجتہٗ۔‘‘ (7)
اگر واقعی وہاں ایسی چیز دست یاب ہوتی ہو اور آپ کو سہولت سے مل جائے تو مجھے اطلاع دیں، تاکہ قیمت فراہم کروں اور روانہ کردوں، پھر خواہ آپ اس کو ڈاک میں بھیجیں، یا ہمراہ لائیں، بہر صورت پندرہ شعبان تک پہنچ جائے اور خیارِ رؤیت حاصل رہے، کیونکہ بعض چیز نہایت عمدہ نفیس ہوتی ہے، مگر مستعمِل کی طبیعت اور مزاج کے موافق نہیں ہوتی۔ اور اگر وہاں نہ ملتی ہو تو آپ بالکل خیال نہ فرمائیں، اور آنے کی تاریخ سے مطلع کر کے مسرور کریں۔ 
بعض امور کا ذکر عمداً چھوڑ دیا، اگر ملاقات نصیب ہوئی (تو) زبانی حال بیان کروں گا۔ زیادہ دعائے عافیت۔ 
                                                                                                                                                                                                                                  بندہ اصغر حسین عفا اللہ عنہ 
                                                                                                                                                                                                                                      دیوبند ۲۰ ؍رجب سنہ ۵۰ھ
پس نوشت: لفافہ پر پتہ نشان اگر صحیح نہ لکھا گیا ہو تو مطلع فرماویں۔

------------------------

حضرت مولانا سید اصغر حسین رحمہ اللہ بنام حضرت علامہ سید محمد یوسف بنوری   رحمہ اللہ

۷۸۷
بخدمتِ عالی مکرم جناب مولانا صاحب! 
السلام علیکم ورحمۃ اللہ! 

عنایت نامہ، گرامی نامہ موصول ہو کر موجبِ صد شکریہ ہوا، زیارتِ حرمین شریفین سے بہت ہی فرحت ہوئی۔ جواب سے معذور ہوں، اُمید ہے کہ اس وقت دیوبند ہی میں موجود ہوں گا۔ 
                                                                                                                                                                               دعاگو 
                                                                                                                                               بندہ اصغر حسین عفا اللہ عنہ

نوٹ: 

یہ مختصر سا مضمون ایک کارڈ پر لکھا ہے، جس کی ابتدا میں نام وپتہ حسبِ ذیل ہے:
’’مولانا حضرت الحاج محمد یوسف البنوری أدام اللہ فضلہم! مقام پشاور، گڑھی میر احمد شاہ۔‘‘
اور ڈاک کی مہر پر تاریخ یوں درج ہے: 
’’دیوبند، سہارنپور، ۲۳ ؍مئی ۳۹ء..........پشاور،۲۵؍ مئی ۳۹ء‘‘

------------------------

 

حضرت مولانا سید اصغر حسین رحمہ اللہ بنام حضرت علامہ سید محمد یوسف بنوری   رحمہ اللہ

مولانا صاحب، کرم فرمائے بندہ!
السلام علیکم ورحمۃ اللہ! 

دعا ہے کہ بعافیت وکامیابی مع الرفقاء، دارالاسلام میں زندگی بہ مشغلۂ علمی بسر فرما رہے ہوں۔
آپ نے اپنی عنایت سے حالات کی اطلاع دے کر مطمئن فرمایا، معمولی اطلاع اِدھر اُدھر سے مولانا (عبدالحق) نافع (8)سے مل گئی تھی، حسبِ عادت دعائے خیر کرتا رہتا تھا۔
جب انسان خلافِ عادت اور جدید ماحول میں پہنچتا ہے تو ایسی ہی ناگواری ہوا کرتی ہے، جیسی آپ کو پیش آئی، رفتہ رفتہ مانوس ہوجاتا ہے، اور مکروہات قلیل رہ جاتے ہیں۔ حیاتِ مستعار باقی رہی تو آپ سے بحث کرکے اپنی بے وقوفی یا باصطلاحِ جدید بزرگی ثابت کروں گا، اور بسم اللہ کے گنبد میں احوالِ زمانہ سے بے خبری! 
جواب میں -جیساکہ عادت ہے- تاخیر ہوئی بوجہ عجز کے نفسِ تحریر سے اور بوجہ نہ حاضر ہونے مضمونِ جواب کے بوجہ عوارض وامراض خصوصاً، آمد ورفت کی دشواری کے سبب تعلیم سے رخصت ماہِ محرم سے لے رکھی ہے، گوشہ گزین یا خانہ نشین ہوں، اسباق دوسروں کو سپرد ہوگئے ہیں، کبھی طاقت ہوتی ہے تو جاکر تبرّعاً خود پڑھا دیتا ہوں۔ مولانا احمد رضا (بجنوری) بھی اس عاجز کے کرم فرما ہیں، سلامِ مسنون اور دعائے خیر عرض کرتا ہوں، حق تعالیٰ آپ حضرات کو اپنی عنایت واعانت سے بخیر وکامیابی واپس لائیں۔مولانا محمد شفیع صاحب (9)دونوں حضرات کو سلامِ مسنون فرماتے ہیں، اور حسرت کرتے ہیں کہ وہاں کے مشغلۂ علمیہ(10)کا مشاہدہ نہیں کرسکے۔ 
احقر عاجز آپ کے خط کو بار بار پڑھتا ہے، اور مضمونِ نفرت عن ماحول کو ملاحظہ کرتا ہے، اور دلچسپی لیتا ہے، اور دعا کرتا ہے کہ آپ کو ’’جبر وقدر‘‘ دونوں سے محفوظ رکھیں، کیونکہ ’’جبر‘‘ تو ہر دو طرف سے ہوسکتا ہے، حتی الوسع فضولیات سے کاغذ سیاہ کیا، معافی اور دعا کا طالب ہوں۔ 
                                                                                                                                                                  بندہ اصغر حسین عفا اللہ عنہ 
                                                                                                                                                             ۱۴؍ جمادی الاولیٰ-دیوبند، چار شنبہ

 

حضرت بنوری رحمہ اللہ کی کتاب ’’بُغیۃ الأریب في مسائل القبلۃ والمحاریب‘‘ پر حضرت مولانا سید اصغر حسین صاحب رحمہ اللہ نے یہ تقریظ اردو میں قلم بند فرمائی تھی، جس کی تعریب اس کتاب کی ابتدا میں شائع ہوچکی ہے۔ فراغت کے فوراً بعد ابتدائی تالیف ہونے کے باوجود حضرت بنوری رحمہ اللہ نے ایک دشوار موضوع پر قلم اُٹھایا ہے، جس کی حضرت میاں صاحب نے بلند الفاظ میں داد دی ہے۔ اصل اردو تحریر نایاب تھی، خطوط کی اشاعت کی مناسبت سے یہ نادر تحریر بھی ریکارڈ سے ہدیۂ قارئین کی جارہی ہے۔

 

تقریظ از حضرت مولانا میاں سید اصغر حسین صاحب رحمہ اللہ

’’ بُغیۃ الأریب في مسائل القبلۃ والمحاریب‘‘ 

حامداً ومصلّیاً

سلالۂ دودمانِ اولیائے کرام، ادیبِ اریب مولانا المولوی محمد یوسف البنوری أدام اللہ فضلہم نے (جو حضرت مولانا المحدث محمد انور شاہ صاحب قدّس اللہ سرّہ العزیز کے ارشد تلامذہ اور اعزّہ رفقاء میں سے ہیں) رسالہ ’’قُبلۃ المجلّي لقبلۃ المصلّي‘‘ (11)تالیف فرماکر اپنی تحقیقاتِ علمیہ اور تدقیقاتِ فقہیہ سے اہلِ علم کے لیے ایک نادر و وافر ذخیرہ جمع فرما دیا ہے، اور حق یہ ہے کہ سلف میں سے کسی نے اس بسط سے اس مسئلہ کو واضح کرنے کی طرف توجہ نہیں فرمائی تھی، حق تعالیٰ کی توفیق ہوئی اور بہترین طرز سے فاضل مؤلف نے بمصداقِ ’’کم ترک الأوّلُ للآخر‘‘ اس کام کو انجام دیا۔ 
ذی علم مؤلف کی تحقیقات، اکابر محققین کی تحقیق کو یاد دلاتی ہے، اور بیش بہا مضامین کی حامل سلیس عبارات بلسانِ عربی مبین شُرّاح ومفسرینِ حدیث کی وضاحتِ بیان کا نمونہ پیش کرتی ہے۔ قابل مؤلف - جزاہ اللہ جزاءً حسناً- نے اسفارِ (کتبِ) کبیرہ وکثیرہ کے مطالعہ کے بعد ایسا قابلِ قدر ذخیرہ مہیّا فرمایا ہے، جو طلبائے علومِ دینیہ کے علاوہ بالغ النظر اور وسیع المطالعہ حضرات اہلِ علم کے لیے بھی دلچسپی کے ساتھ موجبِ بصیرت ومنفعت بخش ہے۔ 
نقلِ مذاہبِ ائمہ کبار میں جس بالغ نظری اور تحقیق سے مؤلفِ علّام نے کام کیا ہے، وہ انہی کا حصہ ہے، اور اہلِ علم وکمال ہی اس کا اندازہ کرسکتے ہیں، اور تطبیقِ دلائل بالمسائل میں جو مجتہدانہ ذکاوت اور حسنِ انتقالِ ذہنی کے نمونے دکھلائے ہیں، ان کی قدر ومنزلت اربابِ ذوق ہی کرسکتے ہیں، اور کتاب کے مطالعہ کے بعد بے ساختہ یہ شعر پڑھ سکتے ہیں :

مَضَتِ الدُّھُوْرُ وَ مَا اَتَيْنَ بِمِثْلِہٖ
وَلَقَدْ اَتٰی فَعَجَزْنَ عَنْ نُظَرَائِہٖ

حق تعالیٰ رسالے کو خلعتِ قبول سے معزّز فرمائیں، اور جناب مؤلف کی سعی (کو) مشکور فرما کر اسی قسم کی اور توفیقاتِ خیر عطا فرما کر مقاصدِ دارین میں فائز المرام کریں، آمین! 
                                                                                                                                                                                              کتبہ الفقير 
                                                                                                                    سيد اصغر حسین حسنی حنفی قادری دیوبندی عفا اللہ تعالیٰ عنہ 
                                                                                                                                                                                  ماہِ رجب سنہ ۱۳۵۳ھ

حواشی

1:- حضرت مولانا سید اصغر حسین صاحب رحمہ اللہ، دیوبند کے ایک معروف علمی گھرانے کے چشم وچراغ تھے، حضرت میاں صاحب کے نام سے معروف تھے۔ دارالعلوم دیوبند کے فاضل اور بعد میں عرصہ دراز تک دارالعلوم ہی کے استاذ رہے۔ طویل مدت تک دورہ حدیث میں سنن ابی داؤد پڑھاتے رہے۔ مفتی محمد شفیع رحمہ اللہ جیسے اکابر ان کے تلامذہ میں شمار ہوتے ہیں، حضرت بنوری رحمہ اللہ سے نہایت پُرخلوص اور محبت آمیز تعلق رکھتے تھے، جس کا کچھ اندازہ پیش نگاہ خطوط سے ہوگا۔ ان کی تالیفات میں مفید الوارثین ، گلزارِ سنت اور حیاتِ شیخ الہند مولانا محمود حسن دیوبندی رحمہ اللہ وغیرہ شامل ہیں۔ ۱۲۹۴ھ میں دیوبند میں ولادت ہوئی۔ اور ۲۲ محرم ۱۳۶۴ھ کو انتقال ہوا۔ ان کے حالات کے لیے ملاحظہ فرمائیے: سوانح حیات از مولانا اختر حسین صاحب رحمہ اللہ (خلف اکبر حضرت میاں صاحب رحمہ اللہ) دارالکتاب اصغریہ ، دیوبند۔

2:- بظاہر سیاسی مشاغل کی جانب اشارہ ہے۔
3:-   بظاہر تعویذ گنڈے کو مستقل مشغلہ بنانا، یا اس پہلو سے شرعی حدود کی رعایت نہ کرنا مقصود ہے۔
4:-قصہ گوئی کے اسلوب پر وعظ خوانی مراد ہے، جو بے سروپا روایات پر مشتمل ہو۔
5:-بظاہر معروف مناظر حضرت مولانا مرتضیٰ حسن صاحب چاند پوری رحمہ اللہ مراد ہیں۔

6:-حضرت حکیم الاسلام مولانا قاری محمد طیب صاحب رحمہ اللہ ۔ 

7:-مشہور ادیب احمد بن محمد انصاری کی کتاب ’’نفحۃ الیمن فیما یزول بذکرہ الشجن‘‘ میں ذکر کردہ درج ذیل حکایت کی جانب اشارہ ہے کہ ایک نابینا شخص مویشی فروش کے پاس آیا اور اسے کہا کہ میرے لیے ایک ایسا گدھا تلاش کرو جو نہ تو اتنا چھوٹا ہو کہ حقیر دکھائی دے اور نہ اتنا بڑا کہ اس کی شہرت ہوجائے، راستہ خالی ہو تو تیز رفتار ہو اور ازدحام ہو تو سبک رفتار ہو، نہ تو ستونوں سے ٹکرائے اور نہ مجھے بوریوں تلے پہنچادے، اسے چارہ کم دوں تو صبر سے کام لے اور زیادہ کھلاؤں تو شکر ادا کرے، اس پر سوار ہوں تو منہ اٹھاکر چل دے اور چھوڑ دوں تو سوجائے۔ ایسے منفرد اوصاف کے حامل جانور کے مطالبہ پر مویشی فروش نے اس شخص سے کہا: آپ تھوڑا صبر سے کام لیجیے، انتظار کیجیے، اگر اللہ تعالیٰ نے قاضی صاحب کی صورت مسخ کرکے انہیں گدھا بنادیا تو میں آپ کی ضرورت پوری کردوں گا: ’’أتی مکفوف نخاسا، فقال لہ: اطلب لي حمارا، لیس بالصغیر المحتقر، ولا الکبیر المشتھر، إن خلی الطریق تدفّق، وإن کثر الزحام ترفّق، لایصادم في السواري، ولا یُدخلني تحت البواري، إن أقللتُ علفَہ صبر، وإن کثرتہ شکر، وإن رکبتُہ ھام، وإن ترکتُہ نام، فقال لہ: اصبر، إن مسخ اللہ القاضي حماراً قضیتُ حاجتک۔‘‘ (الباب الأول في الحکایات، ص:۲۵، مطبعۃ التقدّم العلمیّۃ، مصر، ۱۳۲۴ھ)

8:-حضرت شیخ الہند رحمہ اللہ کے شاگرد، حضرت مولانا عزیرگل رحمہ اللہ کے بھائی اور جامعہ کے پہلے شیخ الحدیث، حضرت بنوری رحمہ اللہ نے ان پر تأثراتی تحریر لکھی کے انتقال کے موقع تھی، جو بصائروعبر جلد:۲ میں درج ہے۔ 

9:-مفتی اعظم پاکستان وبانی جامعہ درالعلوم کراچی
10:-بظاہر مصر میں قیام کے دوران وہاں کے متنوع علمی مشاغل کی جانب اشارہ ہے، جن میں وہاں کے علمی حلقوں، علمی، تحقیقی ودینی اداروں، تالیفی سرگرمیوں اور دیگر مشاغل، نیزعلامہ کوثری رحمہ اللہ ودیگر اہل علم کے ساتھ ربط و استفادہ ، رسائل وجرائد میں حضرت بنوری رحمہ اللہ کے مقالات کی اشاعت ، دارالعلوم دیوبند وعلماء دیوبند کا عرب دنیا میں تعارف اور مجلس علمی کی جانب سے کتابوں کی اشاعت وغیرہ شامل ہیں، جس کی غرض سے حضرت بنوریؒ اور مولانا احمد رضا بجنوری رحمہما اللہ مصر تشریف لے گئے تھے۔دیوبند واکابرِ دیوبند سے متعلق مذکورہ مقالات ’’جامعۃ دیوبند الإسلامیۃ في ضوء المقالات البنوریۃ‘‘ میں شائع ہوچکے ہیں۔
11:-ابتدا میں حکیم الامت حضرت مولانا اشرف علی تھانوی رحمہ اللہ نے کتاب کا یہ نام تجویز فرمایا تھا۔

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے