بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ذو الحجة 1442ھ 29 جولائی 2021 ء

بینات

 
 

مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ  بنام حضرت شیخ الحدیث مولانا محمد زکریا رحمۃ اللہ علیہ 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ  بنام حضرت شیخ الحدیث مولانا محمد زکریا رحمۃ اللہ علیہ 


حضرت علامہ محمد یوسف بنوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت شیخ الحدیث مولانا محمد زکریا رحمۃ اللہ علیہ 

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم
۳جمادی الاولیٰ ۱۳۹۵ھ

عالی مناقب و مفاخر حضرت شیخ الحدیث زادہم اللہ نفعًا وفیضًا وفضلًا ،آمین!

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

 

خدا کرے مزاج اقدس بخیریت ہوں اورآنکھ میں روشنی پوری آگئی ہو،اور آپریشن کامیاب ہو، اور آپریشن سے جو ضعف ہوتا ہے حق تعالیٰ اس سے حفاظت فرمائے، آمین۔
مولانا علی میاں صاحب کی خدمت میں میرا عریضہ جو آپ کی خدمت میں لکھا تھا نقل کرکے بھیجنا درست نہ ہوگا، بیوقوفی سے آپ کی خدمت میں اپنے تأثر کا اظہار کیا، ان کو نفع نہ ہوگا اور شاید موجبِ بُعد ہو، اس لیے بہت اچھا کیا کہ ارسال نہیں فرمایا۔’’حجۃ الوداع‘‘(1) پر مقدمہ (2) شروع کیا ہے، کچھ تمہید تو صرف زینت کے لیے اور ناظرین کی تطییبِ خاطر کے لیے گھسیٹ دی ہے، اگر تین چار گھنٹے مزید آج مل جائیں تو پورا ہوجائے گا۔ ’’مِنہیات ‘‘یا ’’مِنہوات‘‘ سے آپ کی طبیعت مبارک خوش ہوجائے گی، اور اس ’’سواد في بیاض‘‘سے اصلی مقصود بھی یہی ہے، ورنہ دماغ بے حد مشغول (ہے) اور منتشر اشغال نے پریشان کردیا ہے، آفتاب کو چراغ کیا دکھایا جائے گا؟!
 والدمحترم آج کل بظاہر لمحاتِ حیات سرعت سے پورے کررہے ہیں، علیل ہیں، پریشانی اس کی ہے کہ نہ غذا باقاعدہ، نہ دوا باقاعدہ یا بے قاعدہ، بالکل ترکِ اسباب پر اصرار فرمارہے ہیں، اس لیے جو سہارامل سکتا ہے، وہ نہیں ہے۔ اب صرف دعا اس کی ہے کہ موصوف کو راحت وسکون جلد نصیب ہو، اور وہ چیز جس سے ان کو خوشی ہو،آپ بھی یہی دعا فرمائیں ، آپ کو سلام لکھواتے ہیں ، اورخاتمہ بالخیر کی درخواست اورآپ کے لیے بے حد دعائیں فرماتے ہیں۔عزیزم محمد سلمہ سلام عرض کرتے ہیں۔
                                                                                                                                                                                                                                          والسلام
                                                                                                                                                                                                           آپ کا محمد یوسف بنوری عفی عنہ 

 

حضرت علامہ محمد یوسف بنوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت شیخ الحدیث مولانا محمد زکریا رحمۃ اللہ علیہ 

بسم اللہ الرحمٰن الرحیم

۱۴جمادی الاولیٰ ۱۳۹۵ھ

مخدومِ گرامی مفاخر زادکم اللہ توفیقًا إلیٰ کل خیر، في عافیۃٍ و صحۃٍ و قوۃٍ ، آمین!

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

 

نامۂ برکت نے عزت افزائی فرمائی، مقدمہ جیسا کچھ بنا آپ کی خوشنودی کے لیے تحریر کیا گیا، اور ان شاء اللہ تعالیٰ آپ کی خوشنودی حق تعالیٰ کی خوشنودی کا ذریعہ بنے گی، مقدمہ نہ صرف ارتجال واستعجال میں لکھا گیا ہے، بلکہ طبیعت کی انتہائی غیر حاضری میں لکھا گیا ہے، اور آج کل تو میں اکثر اسی غیرحاضری میں مبتلا رہتا ہوں، تمہید میں عرب علماء وناظرین کی رعایت کی گئی ہے، اس لیے قدرے طویل ہوگئی۔
 علاوہ بقیہ تشویشناک امور کے حضرت قبلہ والد صاحب کی علالت نہیں، بلکہ حالت ایسے مرحلہ میں داخل ہوگئی ہے کہ پریشانی ہوتی ہے، فرماتے تھے: ’’جانے کے دن بہت قریب ہیں، لیکن تاخیر ہورہی ہے اور اس تاخیر میں اسرار ہیں۔‘‘دماغ حاضر ہے، البتہ اکثر غنودگی طاری رہتی ہے، آپ کی دعاؤں کی ضرورت ہے۔
 آپ کی کمزوری سے صدمہ ہے، آپریشن کے بعد سنا ہے کہ بے حد کمزوری ہوجاتی ہے، سابقہ آپریشن کے عہد میں ضعفِ طبعی اتنا نہ تھا ،اس لیے اس کا زیادہ احساس نہیں ہوا، عزیزم محمد سلمہ کی خواہش ہے کہ اس ضعف کے رفع کرنے کے لیے کوئی خمیرہ مروارید عنبری یاخمیرہ ابریشم ارشد والا اگر کوئی آنے والا مل جائے تو ارسال کرے۔ حاجی بشیر صاحب بہت بہتر ذریعہ تھے، لیکن اُس وقت اس کا احساس نہیں ہوسکا۔
 میری زندگی بہت ضائع گزررہی ہے، اس کے لیے خصوصی دعاؤں کی ضرورت ہے، روضۂ اقدس پر ابلاغِ سلام کی سعادت سے محروم نہ فرمائیں۔ اگرچہ عرضِ سلام سے شرمساری ہے، ’’تو بیرونِ دَرچہ کردی؟!‘‘(3) والا معاملہ ہے، اللہ تعالیٰ رحم فرمائیں۔
 سننے میں آیا ہے کہ آپ پھر ماہِ رمضان مبارک احباب کی خاطر سہارن پور میں گزارنے کاارادہ فرمارہے ہیں ، اگر کوئی غیبی اشارہ ہوتو ہمیں اس میں دخل کی ضرورت نہیں ، ورنہ آپ کی صحت کے پیشِ نظر یہ پسند نہیں۔ والسلام
                                                                                                                                                                                                                                            محمد یوسف بنوری عفی عنہ

 حاشیہ:(1) حضرت شیخ الحدیث رحمۃ اللہ علیہ کی کتاب ’’حجۃ الوداع وجزء عمرات النبي ‘‘مراد ہے،جس کے کئی طبعات شائع ہوئے اور اب کچھ عرصہ قبل مولانا ڈاکٹر ولی الدین بن تقی الدین ندوی حفظہ اللہ کی تحقیق وتخریج کے ساتھ دارالقلم دمشق سے عمدہ ایڈیشن چھپ چکاہے۔

 حاشیہ:(2) حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ کا یہ مقدمہ ’’المقدمات البنوریۃ‘‘ کے ضمن میں طبع ہوچکا ہے، ان شاء اللہ! جلد ہی اس کتاب کا جدید طبع مجلس دعوت وتحقیق اسلامی جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن سے شائع ہوگا۔

 حاشیہ:(3)   فارسی کے درج ذیل شعرکی جانب اشارہ ہے:
 

بہ طوافِ کعبہ رفتم بہ حرم اہم نہ دادند
تو بیرونِ دَر چہ کردی کہ درونِ خانہ آئی؟!

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے