بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 21 ستمبر 2020 ء

بینات

 
 

لاک ڈاؤن کے دوران دُکانوں کے کرایہ  ملازمین کی تنخواہوں اور گاڑی وغیرہ کی فیس کا حکم!

لاک ڈاؤن کے دوران دُکانوں کے کرایہ

 

 ملازمین کی تنخواہوں اور گاڑی وغیرہ کی فیس کا حکم!


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:

موجودہ صورت حال میں جب کہ حکومت کے لاک ڈاؤن کے اعلان کی وجہ سے کاروباری مراکز بند ہیں، دفاتر اور دیگر کاروباری سرگرمیاں معطل ہیں، درج ذیل سوالات دریافت طلب ہیں:
۱:-جو دکانیں یا دفتر وغیرہ کرایہ پر دیے گئے ہیں، موجودہ حالات میں کیا ان کا کرایہ دینا واجب ہے؟ جب کہ کرایہ دار لاک ڈاؤن کے دوران ان کرایہ کی املاک سے فائدہ نہیں حاصل کرپارہا۔
۲:-جن اداروں،دکانوں، کارخانوں وغیرہ کے ملازمین یا گھریلو ملازمین حاضری سے اور اپنی خدمات فراہم کرنے سے قاصر ہیں، کیا یہ ملازمین اُجرت یا تنخواہ کے حق دار ہیں؟
۳:- اسکول کی وین چلانے والے جن بچوں کو اسکول لاتے لے جاتے رہے، ان سے لاک ڈاؤن کے دنوں کی فیس کا مطالبہ کرسکتے ہیں؟                                مستفتی:محمد سعد، کراچی

الجواب حامدًا ومصلیًا

۱:-صورتِ مسئولہ میںکرایہ پر دی ہوئی دکانوں اور دفاتر کے بارے میں شرعی حکم یہ ہے کہ اگر یہ جگہیں کرایہ دار کے قبضے اور تحویل میں ہیں اور اس نے یہ جگہیںمالک کو واپس نہیں کیں تو مالک اس دکان، مکان اور دفتر کے کرایہ کا حق دار ہوگا اور کرایہ دارشریعت کے قانون کے مطابق کرایہ ادا کرنے کا پابند ہوگا۔ (۱)
البتہ موجودہ حالات میں مسلمان جہاں بالعموم احسا ن و تبرع کررہے ہیںاور اپنے مسلمان بھائیوں اور دیگر بے روزگار بھائیوں پر خرچ کررہے ہیں، وہاں اپنے ان کرایہ دار بھائیوں کے ساتھ بھی رعایت کا برتاؤ کریں، کرایہ معاف کردیں یا کرایہ میں کمی کردیں، تو یہ ان کا تبرع واحسان ہوگا، ان کے لیے اللہ کے ہاں اجر کا وعدہ ہے۔ حضرت جابر بن عبد اللہ  رضی اللہ عنہ  سے روایت ہے کہ : رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم  نے فرمایا کہ : ’’اللہ تعالیٰ اس بندے پر رحم فرمائے جب بیچے تو نرم خوئی اختیار کرے، خریدے تو نرم خوئی اختیار کرے، قرض کا مطالبہ کرے تو نرم خوئی اختیار کرے اور قرض کی ادائیگی کرے تو نرم خوئی اختیار کرے۔‘‘  (۲)
۲:- جن اداروں، کارخانوں اور دکانوں کے کارکن یا گھریلو ملازمین لاک ڈاؤن کے دورانیہ میں اپنی خدمات باقاعدہ طور پر انجام نہیں دے سکے، اس میں مالکان وملازمین کی طرف سے کوئی کوتاہی نہیں ہے، یہ رکاوٹ ملکی حالات اور سرکاری احکامات کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے، اس لیے شرعاً مالک اور ملازم اپنے طے شدہ اصولوں کے مطابق معاملہ کرنے کے پابند رہیں گے، اس لیے کہ یہ تمام افراد قانونِ شریعت کی اصطلاح میں ’’اجیرِخاص‘‘ کہلاتے ہیں، جن کی طرف سے مفوضہ امور میں کوئی کوتاہی نہ ہو تو وہ اُجرت (تنخواہ) کے مستحق ٹھہرتے ہیں، البتہ یہ بات بھی پیشِ نظر رہے کہ جس طرح ملازمین کی تنخواہ کے مسائل ہیں، اسی طرح مالک کی آمدن کی پریشانیاں بھی ایک حقیقت ہے، اس لیے دونوں فریق باہمی مصالحت سے دو طرفہ رعایت پر مبنی صورت طے کرلیں، جس سے مزدور و ملازم کا چولہا بھی جلتا رہے اور مالک پر بھی بوجھ نہ پڑے۔(۳)
۳:- اگر اسکول کی وین چلانے والوں (ڈرائیوروں) کے ساتھ طلبہ کے سرپرست یا اسکول انتظامیہ کا تعطیلات کے متعلق یہ معاہدہ ہوا تھا کہ انہیں تعطیلات کی فیس/تنخواہ نہیں ملے گی تو لاک ڈاؤن کی تعطیلات میں وہ فیس/تنخواہ کے مستحق نہیں ہوں گے اور اگرجانبین میں یہ معاہدہ ہوا تھا کہ ڈرائیوروں کو تعطیلات کی فیس/تنخواہ  ملے گی تو انہیں لاک ڈاؤن کی تعطیلات کی تنخواہ بھی ملے گی۔
اور اگر تعطیلات کے متعلق ان کا کوئی معاہدہ نہیں ہوا اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے طلبہ کے سرپرست یا اسکول انتظامیہ نے اسکول وین چلانے والوں کے ساتھ جو معاہدہ کیا تھا وہ ختم کردیا تو وہ فیس/تنخواہ کے مستحق نہیں۔
لیکن اگر تعطیلات کے متعلق ان کا کوئی معاہدہ نہیں ہوا اور لاک ڈاؤن کی وجہ سے طلبہ کے سرپرست یا اسکول انتظامیہ نے اسکول وین چلانے والوں کے ساتھ کیا گیا معاہدہ ختم نہیں کیا تو وین چلانے والے اُجرت (وین فیس) کے مستحق ہوں گے۔
البتہ آج کل جن اسکولوں نے آن لائن تدریس شروع کردی ہے، یہ بظاہر اس بات کا قرینہ ہے کہ ادارے اور وین ڈرائیور کے درمیان طے شدہ معاہدہ معطل ہوچکا ہے، اس لیے وہاں وین چلانے والے فیس / تنخواہ کے مستحق نہیں ہوں گے۔(۴)

حوالہ جات

۱:- ’’المادۃ: ۲۷۰: تلزم الأجرۃ أیضا في الإجارۃ الصحیحۃ بالاقتدار علی استیفاء المنفعۃ۔۔۔۔۔‘‘ (شرح المجلۃ لخالد الاتاسی، ج:۲، ص:۵۵۴، ط:رشیدیہ، کوئٹہ) 
’’(و) اعلم أن (الأجر لایلزم بالعقد فلایجب تسلیمہ) بہ (بل بتعجیلہ أو شرطہ في الإجارۃ) المنجزۃ ۔۔۔۔۔ (أو الاستیفاء) للمنفعۃ (أو تمکنہ منہ) إلا في ثلاث مذکورۃ في الأشیاء۔ (قولہ أو تمکنہ منہ) في الہدایۃ: وإذا قبض المستاجر الدار فعلیہ الأجرۃ وإن لم یسکن۔ قال في النہایۃ: وہٰذہ مقیدۃ بقیود: أحدہما التمکن، فإن منعہ المالک أو الأجنبي أو سلم الدار مشغولۃ بمتاعہ لاتجب الأجرۃ۔‘‘ (رد المحتار ، ج:۶، ص:۱۱، ط:سعید)
۲:- ’’عن جابر بن عبد اللّٰہؓ قال: قال رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم : رحم اللّٰہ عبدا سمحًا إذا باع، سمحا إذا اشتری، سمحا إذا اقتضی، سمحا إذا قضی۔‘‘ (صحیح ابن حبان، کتاب البیوع، ذکر ترحم اللّٰہ جل و علا علی المسامح،ج:۱،ص:۲۶۷، ط: مؤسسۃ الرسالۃ)
۳:- ’’والثاني: وہو الأجیر الخاص ویسمی أجیر واحد، وہو من یعمل لواحد عملا مؤقتا بالتخصیص، ویستحق الأجر بتسلیم نفسہ فی المدۃ۔‘‘ (الدر المختار مع الشامي، الإجارۃ، باب ضمان الأجیر، مبحث الأجیر الخاص،ج: ۴،ص:۴۹، ط:سعید)
’’قال ط: وفیہ أنہ إذا استؤجر شہرا لرعي الغنم کان خاصا وإن لم یذکر التخصیص، فلعل المراد بالتخصیص أن لایذکر عموما سواء ذکر التخصیص أو أہملہ، فإن الخاص یصیر مشترکا بذکر التعمیم کما یأتي في عبارۃ الدرر (قولہ وإن لم یعمل) أي إذا تمکن من العمل، فلو سلم نفسہ ولم یتمکن منہ لعذر کمطر ونحوہ لا أجر لہ کما في المعراج عن الذخیرۃ۔ ’’الأجیر الخاص ہو من یعمل لمعین عملا مؤقتا، ویکون عقدہ لمدۃ ویستحق الأجیر بتسلیم نفسہ في المدۃ: لان منافعہ صارت مستحقۃ لمن استاجرہ في مدۃ العقد۔ ‘‘ (الموسوعۃ الفقہیۃ الکویتیۃ ، ج:۱،ص:۲۸۸۔ ملتقی الأبحر علی مجمع الأنہر، الإجارۃ ، ج:۳، ص:۵۲۸-۵۴۷، ط:دارالکتب العلمیۃ ، بیروت )
’’وفیہ أیضا: استأجر أجیرا شہرا لیعمل لہ کذا لایدخل یوم الجمعۃ للعرف… الخ۔‘‘ (ج:۴، ص:۴۱۷، ط: رشیدیہ)
’’وہل یأخذ أیام البطالۃ کعید ورمضان لم أرہ وینبغی إلحاقہٗ ببطالۃ القاضي، واختلفوا فیہا ، والأصح أنہ یأخذ: لأنہا للاستراحۃ ، أشباہ من قاعدۃ العادۃ محکمۃ۔‘‘ (رد المحتار ، ج:۴ ،ص:۳۷۲، ط: سعید)
۴:- ’’الإجارۃ تنقض بالأعذار عندنا وذٰلک علٰی وجوہ إما أن یکون من قبل أحد العاقدین أو من قبل المعقود علیہ وإذا تحقق العذر ذکر في بعض الروایات أن الإجارۃ لا تنقض وفي بعضہا تنقض، ومشایخنا وفقوا، فقالوا: إن کانت الإجارۃ لغرض ولم یبق ذلک الغرض أو کان عذر یمنعہ من الجري علی موجب العقد شرعا تنتقض الإجارۃ من غیر نقض کما لو استأجر إنسانا لقطع یدہٖ عند وقوع الأکلۃ أو لقطع السن عند الوجع فبرئت الأکلۃ وزال الوجع تنتقض الإجارۃ لأنہ لا یمکنہ الجري علی موجب العقد شرعا ، وکل عذر لا یمنع المضي في موجب العقد شرعًا ولکن یلحقہ نوع ضرر یحتاج فیہ إلی الفسخ. کذا في الذخیرۃ، وإذا تحقق العذر ومست الحاجۃ إلی النقض ہل یتفرد صاحب العذر بالنقض أو یحتاج إلی القضاء أو الرضاء اختلفت الروایات فیہ ، والصحیح أن العذر إذا کان ظاہرا یتفرد، وإن کان مشتبہا لا یتفرد، کذا في فتاوی قاضی خان۔‘‘ (الفتاوی الہندیۃ ، کتاب الإجارۃ، الباب التاسع عشر،ج: ۴،ص:۴۵۸، ط: دار الفکر)                                                                                                                           فقط واللہ اعلم
                                 الجواب صحیح                                                                               الجواب صحیح                                                                     الجواب صحیح                                                                       کتبہ
                          ابوبکر سعید الرحمن                                                                     محمد انعام الحق                                                                       رفیق احمد                                                                محمد عمران ممتاز
                                                                                                                                                                                                                                                                                                   دارالافتاء جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے