بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

15 ذو الحجة 1441ھ- 06 اگست 2020 ء

بینات

 
 

سپر مارکیٹ میں مخصوص خریداری پرملنے والے کارڈ اور پوائنٹس پر ڈسکاؤنٹ کا حکم

سپر مارکیٹ میں مخصوص خریداری پرملنے والے کارڈ اور پوائنٹس پر ڈسکاؤنٹ کا حکم

 


کیا فرماتے ہیں مفتیانِ کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
امتیاز سپر مارکیٹ میں پندرہ ہزار (15000) کی خریداری پر امتیاز کا کارڈ ملتا ہے، پھر اس کے استعمال کرنے پر مفت پوائنٹ ملتے ہیں، پھر بعد میں یہ پوائنٹ بل کی ادائیگی کے لیے پیسوں کی طرح استعمال ہوتے ہیں۔ 
اس کا کیا حکم ہے؟ جائز ہے یا نہیں؟ کیونکہ اس کارڈ کو استعمال کرنے سے ڈسکاؤنٹ ملتا ہے۔ مفت پوائنٹ (بغیر کسی عوض کے) ملتے ہیں، پھر مذکورہ پوائنٹس کے بدلے ’’ڈسکاؤنٹ‘‘ ملتا ہے۔ 

مستفتی: عبدالرافع (گلشن اقبال ، کراچی)

الجواب حامدًا ومصلیًا

واضح رہے کہ بعض دکاندار اپنے سامان کو زیادہ سے زیادہ فروخت کرنے کے لیے لوگوں کو ترغیبات دیتے رہتے ہیں۔ اگر کوئی گاہک ان کی دکان سے ان کی مقرر کردہ مقدار تک کا سامان خریدتا ہے تو اسے ایک کوپن یا کارڈ دیا جاتا ہے، پھر مزید خریداری پر اس کارڈ پر پوائنٹس ملتے ہیں اور ان پوائنٹس کے عوض اسے ڈسکاؤنٹ ملتا ہے، تو اس کے بارے میں شرعی حکم یہ ہے کہ اگر دکاندار سامان کی وہی قیمت لیتا ہے جو عام طور پر بازار میں ہوتی ہے تو مذکورہ کارڈ کا لینا اور اس کا استعمال کرنا شرعاً جائز ہے اور اس کے ذریعہ ملنے والے فوائد اور ڈسکاؤنٹ دکاندار کی طرف سے تبرُّع ہے، جو کہ شرعاً جائز ہے۔’’کشف الأسرار‘‘ میں ہے:
’’لأن التّبرُّع إنما صار مشروعًا في حقہٖ لکونہٖ وسیلۃ إلی التجارۃ في المستقبل۔‘‘ (کشف الاسرار شرح اصول البزدوی، باب الامور المعارضۃ علی الأہلیۃ، باب معرفۃ اقسام الاثبات والعلل والشروط، ج:۴، ص:۳۰۳، الناشر: دارالکتاب الاسلامی)
’’فقہ البیوع‘‘ میں ہے:
’’الثالث: ماجری بہ عمل بعض التجار أنہم یعطون جوائز لعملائہم الذین اشتروا منہم کمّیّۃ مخصوصۃ، ولو في صفقات مختلفۃ۔ وقد تعطي ہٰذہ الجوائز بقدر الکمّیّۃ لکل أحد ، وقد تعطی الجوائز بالقرعۃ۔ ولیس ہٰذا من قبیل الزیادۃ في المبیع لأنہا تعطی عادۃ بعد صفقات متعددۃ في أزمنۃ وأمکنۃ مختلفۃ، فلاسبیل إلی نسبتہا إلی مبیع واحد۔ فہي ہبۃ مبتدأۃ موعودۃ من البائع لتشجیع الناس علی أن یشتروا البضائع منہ۔ وجواز أخذہا مشروط بأن لایکون البائع زاد في ثمن البضعۃ من أجل ہٰذہ الجوائز، وإلا صار نوعا من القمار، لأن مازاد علی ثمن المثل إنما طولب بہٖ علی سبیل الغرز، واحتمال أن یفوز المشتري بالجائزۃ۔‘‘ (فقہ البیوع علی المذاہب الأربعۃ، الجزء الثانی ، ص:۸۱۱، المبحث الثامن: تقسیم البییع من حیث ترتب آثارہ، الباب الاول فی احکام البیع الصحیح بدون خیار الجوائز علی المبیعات) فقط واللہ اعلم
                                       الجواب صحیح                                                                         الجواب صحیح                                                                                                             کتبہ
                                 ابوبکرسعید الرحمن                                                                  محمد انعام الحق                                                                                         تقی الدین شامزی
                                     الجواب صحیح                                                                                                                                                                                                                      دارالافتاء
                                     محمد عبدالقادر                                                                                                                                                                             جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے