بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ذو الحجة 1441ھ- 09 اگست 2020 ء

بینات

 
 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

 

حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت مولانا فضل محمد سواتی رحمۃ اللہ علیہ 


تاریخ :۱۶؍رمضان ۱۳۷۴ھ ۹؍مئی ۱۹۵۵ء                                                         گرامی مفاخر محترم! زادکم اللّٰہ کرامۃً و کرمًا جمًا

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

 

نامۂ مکارم نے ممنون وشاد کام فرمایا:

اے تو خوش باشی کہ وقتِ ما خوش کردی

محترما! جو کچھ آپ نے فرمایا بالکل صحیح ہے اور الحمدللہ کہ مجھے کافی حد تک اس کا احساس ہے، مجھے اگر ا س کا خطرہ ہوتاکہ آپ مجھے بالکل بے نوا چھوڑدیں گے توآخری حیلہ وسیلہ عالمِ اسباب میں یہی تھا کہ مولانا مدنی مدظلہم کو اس انداز سے عریضہ لکھتا کہ مجھے کامل توقع تھی کہ وہ آپ کو مجبور کرتے اور ان شاء اللہ تعالیٰ جواب میں آپ کو بے بس بننا تھا، لیکن خیال یہی تھاکہ الحمدللہ جانبین کو جو قلبی رابطہ ہے شاید کسی توسل کے وجود رابطے کی حاجت نہ ہوگی۔
میں بارہا والد محترم مدظلہٗ اور رفیق محترم مولانالطف اللہ صاحب اور خداجانے کتنے حضرات کے سامنے اس حقیقت کا اعتراف بلاکسی تردُّد کے کرچکا ہوں کہ طلبہ سے زیادہ اور کہیں زیادہ اساتذہ کو آپ کی حاجت ہے۔ کسی علمی ادارے کا اور اہم ترین کسی علمی خدمت کا جب بھی تصور آیا تو آپ کے وجود کا تصور لازمِ ماہیت پایا۔ اور اہم ترین اور عظیم ترین علمی خدمت میں رفاقت کو لزومِ بین بالمعنی الاخص سے کم تصور نہیں کیا۔ خدا کا شکر ہے کہ میں تو دارین کی معیتِ دائمی اور قربِ حقیقی کا متمنی رہا ہوں۔
ان حالات اور ان اعتقادات میں یہ کتنا بڑا ظلم اور عدوان ہوتا کہ آپ مجھے ایسا بناتے کہ سارے اعتقادات نقیضِ معتقد بنتے، اور ’’لایحتمل النقیض‘‘ والے ایقانی درجہ کو وسوسۂ نفسانی بناتے۔ خدا کی قسم! خدمت، قدر دانی وما إلٰی ذلک من الکلمات المتعارفۃ کو اس مقام کے لیے جہاں ہم اور آپ ہیں ایک اجنبیت اور غیریت سمجھتا ہوں۔ آپ جو کچھ ہیں اور جیسے کچھ ہیں ظاہری یامعنوی ہم حتمی عقد کرچکے ہیں، خیارِ رؤیت کی حالتِ منتظرہ کی اس میں کوئی گنجائش نہیں۔ اس بازار میں یوسف خریدار بن چکاہے، نقد زر سے نہیں نقد جان سے :

ولي شاھد من مقلتي ولساني

بات پھیل رہی ہے اور داستان لذیذ ہے،جانبین کا رابطہ چونکہ موضوعِ بحث ہے، اس لیے مزید تطویل سے شاید بدیہی نظری بن جائے، اس لیے بجائے تطویل تقصیر ہی انسب ہے،اور آپ بھی تسلیم فرمائیں گے کہ اس تقصیر میں میری کوئی تقصیر نہیں ہوگی، بچوں کی تربیت کی اللہ تعالیٰ کوئی سبیل نکال ہی دے گا۔
بہرحال جہاں طیب وعبداللہ تھے اور آپ دیوبند میں تھے اور وہ تنہا تھے، اب تو عبدالرحمن وقاسم سلمہم کے ساتھ عبداللہ وطیب ہوں گے، اگر اللہ تعالیٰ ہمارے اس کام کو برکت عطا فرمائے تو ان شاء اللہ! آپ اپنی ہی زیرِسایہ سب کی تربیت فرمائیں گے، وماذٰلک علی اللّٰہ بعزیز۔
میں ڈاکخانہ گیا تھا، کچھ کام تھا، جوکچھ ڈاک کاکام آج کرناتھا کرچکاتھا، ڈاک خانہ میں لفافہ آپ کا ملا، سوء اتفاق سے چشمہ نہیں لے گیاتھا، ناتمام الفاظ کو منتشر شعاعوں سے سمیٹنے کی کوشش کی، اور جلد گھر پہنچا کہ عینک لگاکر پڑھوں، پڑھتے ہی جواب کے لیے چند سطرلکھنے کی فوری خواہش ہوئی، کل تک انتظار مشکل معلوم ہوا۔
میں کل تسنیم ونوائے پاکستان والفلاح میں مختصر اعلان شائع کرنے والا ہوں۔ آپ کی تشریف آوری کے بعد مجھے توقع ہے کہ حضرت مولانا عبدالرحمن صاحب بھی جلد آمادہ ہوجائیں گے۔ مولاناطفیل صاحب سے عرصۂ دراز کے بعد اُن کے دفتر میں ملاقات ہوئی۔ خدا کاشکر ہے کہ سابق تکدر کا جانبین کے دلوں پر کوئی اثر نہ تھا،اپنی سفرِ سرحد کی داستان بڑی تفصیل سے سنائی۔
مجھے ہر جمعہ کو کراچی جانا پڑتا ہے، تاکہ مہمات کی تکمیل کی جلد سبیل نکل آئے۔ تیس ہزار کا بجٹ بنایا ہے، ۱۵ہزار بمد زکاۃ طلبہ کے لیے، اور ۱۵ہزار بمد تبرعات برائے تعلیم وکتب۔
تقریباً دونوں مدوں میں نصف نصف تک مرحلہ پہنچ گیا ہے، اس کا عزم الحمدللہ کرلیاہے کہ بمدِمشاہرات زکاۃ کی رقم نہیں لیں گے،اور متعارفہ حیلہ کرکے کام نہیں ملائیں گے، نرجو اللّٰہَ سبحانہٗ أن یبارک لنا في عزمنا ویوفقنا إلٰی مافیہ صلاحنا۔ ماہِ برکات ہے، اللہ تعالیٰ کے جود کامہینہ ہے۔ تخلُّق باخلاق اللہ ‘ اصفیاء باصفا کا شیوہ ہے، اور تشبُّہ بالصالحین کم سے کم تو مطلوب ہونا چاہیے۔ میں اپنی ذات اور متعلقین میں جن جن ضروریات وحاجات کی تکمیل کاآرزومند ہوں، اکثر آپ کے سامنے ہوں گے، فأرجوا أن لاتنسوني في صالح دعواتکم لتلک الحاجات۔

اطلاع:

جمہوریہ سوریہ کی ’’مجلس المجمع العلمي العربي‘‘ نے پاکستان سے رکن منتخب کرنے کے لیے سفارت خانہ کے ذریعہ تحقیق کرائی تھی،تین نام پیش ہوئے تھے،’’قرعۂ فال بنامِ من دیوانہ زدند‘‘۔ پرسوں رجسٹرڈ رسمی اطلاع وزیر معارفِ سوریہ اور رئیس الوزراء صبرء کے دستخطوں سے پہنچی ہے۔ والسلام
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      محمد یوسف بنوری عفااللہ عنہ 

 

حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت مولانا فضل محمد سواتی رحمۃ اللہ علیہ 

 

تاریخ :۹؍صفر الخیر                                                                           گرامی مفاخر محترم، زیدت معالیکم
السلام علیکم ورحمۃ اللہ و برکاتہ

نامۂ سامی باعثِ شرف ہوا، زمانۂ دراز کے بعد عہدِ سابق کی یاد تازہ ہوگئی، مفصل مکتوب نے تقریباً کامل ملاقات کا حظ دیا، توجہ والطاف کا شکر گزار ہوں۔ حضرت مدنی دامت برکاتہم ۲۷؍نومبر کو جمعیت العلماء صوبہ سی پی کی صدارت سے فارغ ہوکر دھولیہ مالیگاؤں تشریف لے جائیں گے۔ مراجعت میں اگر فرصت ملی تو ہم مشتاقانِ زیارت کو اپنے قدومِ میمون سے سعادت اندوز فرمائیں گے۔ وعدہ فرماچکے ہیں، کاش! اس موقع پر آپ بھی ہوتے۔
شیخ کوثریؒ کے چند رسائل بھی بطور ہدیہ پیش کرنے کی سعادت حاصل کروں گا، آپ کے لیے بھی تو تین رسالے رکھ چھوڑے ہیں، بقیہ زائدنہیں۔ اگر مصر سے کتابیں منگوائیں تو آپ کے لیے منگائیں گے۔ مصر میں کتابیں بے حد گراں ہیں، سو روپیہ کی حقیر رقم مہمات کے لیے ہرگز کفایت نہیں کرتی۔ حیدرآباد کے دائرۃ المعارف کی مطبوعات بہت گراں ہوگئی ہیں، اب صرف بمشکل اربابِ مکاتب کو ربع کمیشن دیتے ہیں، سابق مراعات ختم ہوچکی ہیں: ’’آں قدح بشکست آں ساقی نماند‘‘۔
افسوس ’’وتلک الأیام نداولھا بین الناس‘‘ ہندوستان میں علمی حالات مایوس کن ہیں، بلکہ ہمت شکن، البتہ توقع ہے کہ شاید سرزمینِ پنجاب میں پھر کوئی بہار آئے۔ یہاں مدارس ہیں، اساتذہ ہیں، لیکن طلبۂ علم کاقحط ہے۔ بدشوق، مہمل، بداخلاق کیسے مخاطب بن سکتے ہیں، اس لیے اب مجھ پر یہاں کی زندگی کے متعلق سوچنا پڑرہا ہے۔ آپ کا کیاخیال ہے؟ کراچی ،ملتان وغیرہ سے دعوت نامے آئے تھے، اور مدرسی کے تھے، لیکن میں نے عذر کردیا تھا۔
دارالعلوم دیوبند نے مطابق تجویز شورائی منعقدہ ماہِ شوال دعوت دی تھی، لیکن اعتذار کرنا پڑا۔ آپ نے حضرت گل داد صاحب سے تعلُّق کی نوعیت کا ذکر نہیں کیا۔ حکیم صاحب کس عالم میں ہیں، آپ کی تجارتِ مردان کا کیا حال ہے؟ پشاور کبھی تشریف لے جانا ہوتا ہے یا نہیں؟ مولوی محمد ایوب کا کیا حال ہے؟
مولانا ادریس صاحب کاندہلوی شیخ الحدیث جامعہ عباسیہ کو ہوکر ہجرت کرنے والے ہیں۔ مولانا بشیر احمد صاحب وہاں کے سرپرست مقرر ہوگئے ہیں، ان کی وجہ سے یہ انتخاب عمل میں آیا ہے۔ ۔۔۔۔۔۔ اس وقت ابھی چند سطروں پر قناعت کرتا ہوں، آپ بھی کرلیجیے۔ آج خطوط لکھنے بیٹھا ہوں، بہت لکھنے ہیں، مولوی عبدالرؤف صاحب کو آپ کا والانامہ دکھلایا تھا، وہ جواب لکھیں گے۔ آج سہ ماہی امتحان میں ہیں، آپ نے سچ فرمایا تھا ۔۔۔۔ ولکن ایں بالفعول الخ
بس اب رخصت ہوتا ہوں، توجہات ومراسلات سے فراموش نہ فرمائیں۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                             والسلام : 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   ختام 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                     محمدیوسف بنوری عفا اللہ عنہ 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے