بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 12 نومبر 2019 ء

بینات

 
 

المیزان انویسٹمنٹ میں سرمایہ کاری کرنا (اسلامک میوچل فنڈز اور اسٹاک مارکیٹ کے شئیرز کا حکم)

المیزان انویسٹمنٹ میں سرمایہ کاری کرنا

(اسلامک میوچل فنڈز اور اسٹاک مارکیٹ کے شئیرز کا حکم)

 

کیا فرماتے ہیں علماء کرام ومفتیانِ عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:
میرا نام ذیشان اللہ ہے اور میں ایک مقامی دواساز کمپنی میں ملازمت کرتا ہوں۔ میری بہت معقول تنخواہ ہے اور اس میں ہر سال کمپنی کی طرف سے اضافہ بھی ہوتا ہے۔ میری اس تنخواہ میں سے ہر مہینے انکم ٹیکس کٹتا ہے جو کمپنی خود کاٹ کر حکومت کے ادارے F.B.R کو جمع کرادیتی ہے۔ حکومت کے قانون کے مطابق جس کی جتنی زیادہ تنخواہ ہوتی ہے اس کا اتنا ہی زیادہ ٹیکس کٹتا ہے۔ چونکہ میری تنخواہ زیادہ ہے، اس وجہ سے میری تنخواہ کا تقریباً ۲۵% (پچیس فیصد) انکم ٹیکس کی مد میں کٹتا ہے اور حکومت کو جمع ہوجاتا ہے۔
حکومتِ پاکستان نے سن ۲۰۰۱ء میں ایک انکم ٹیکس آرڈیننس جاری کیا جس کے مطابق اگر کوئی ملازمت پیشہ یا کاروباری فرد کسی جگہ اپنے پیسے لگائے (investment) تو حکومت کی جانب سے ٹیکس میں کمی ہوگی اور حکومت اس کو انکم ٹیکس میں کچھ چھوٹ دے گی۔
عرض یہ ہے کہ چونکہ میری تنخواہ کا ایک اچھا خاصہ حصہ( پیسے -Amount) انکم ٹیکس میں کٹتے ہیں، اس لیے میں حکومت کی اس پیشکش سے فائدہ اُٹھانا چاہتا ہوں اور اپنے پیسے investکرنا چاہتا ہوں ۔ اس وقت پاکستان میں بہت سے ادارے ہیں جو اس طرح کی سرمایہ کاری کا کام کرتے ہیں، ان میں سے شرعی اور غیرشرعی ادارے دونوں ہیں۔ میں اپنے پیسے ’’المیزان انویسٹمنٹ‘‘ میں لگانا چاہتا ہوں جو کہ دارالعلوم کورنگی (مفتی تقی عثمانی صاحب) سے منظور شدہ ہے۔ المیزان انویسٹمنٹ والے ان اداروں میںپیسہ لگاتے ہیں جو کام شرعی طور پر درست ہیں جیسے تیل کی کمپنی، سیمنٹ بنانے والی کمپنی، بجلی بنانے والی کمپنی وغیرہ۔ المیزان انویسٹمنٹ ان اداروں کے شئیرز (Shares) میں پیسے لگاتی ہیں جو اسٹاک ایکسچینج (Stock Exchange) میں ہوتا ہے۔
اب سوال یہ ہے کہ:
۱:- کیا میرا حکومت کی مہیا کردہ سہولت لینا جائز ہے، جس میں اگر میں ’’المیزان‘‘ میں انویسٹ کروں تومیرا انکم ٹیکس کم کٹے گا اور مجھے حکومت کی جانب سے چھوٹ ملے گی؟
۲:- اس کے ساتھ ساتھ میری سرمایہ کاری جو ’’المیزان انویسٹمنٹ‘‘ میں کروں گا، اس کا مجھے نفع ملے گا۔ کیا یہ نفع میرے لیے شرعاً جائز ہے؟ چونکہ المیزان انویسٹمنٹ میں سرمایہ کاری کرنے سے میرا سرمایہ (Stock Exchange) اسٹاک ایکسچینج میںلگے گا جس میں نفع نقصان دونوں ہوسکتے ہیں، تو کیا یہ جائز ہوگا؟
۳:-اگراس انویسٹمنٹ کا نفع میرے لیے شرعاً جائز نہیںہوگاتو کیامیں صرف حکومت کی سہولت (جو کہ انکم ٹیکس کم ہونے کی صورت میں ہے) حاصل کرنے کے لیے یہ انویسٹمنٹ کرسکتا ہوں؟ اور جو نفع اس انویسٹمنٹ سے آئے اس کو میں نہ لوں یا پھر لے کر اپنے استعمال میں نہ لاؤں اورکسی ضرورت مند کو دے دوں تو جائز ہے؟ یا پھر یہ کام میں انکم ٹیکس کی سہولت کے لیے بھی نہیں کرسکتا؟ 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                     برائے مہربانی اس مسئلے میں میری رہنمائی فرمائیں۔ شکریہ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   ذیشان اللہ، فیڈرل بی ایریا، کراچی

الجواب حامداً ومصلیاً

واضح رہے کہ مروجہ اسلامی میوچل فنڈز کے طریقہ کار کا خلاصہ یہ ہے کہ :
انویسٹر بطور مؤکل کے اپنی رقم فنڈز والوں کو پیش کرتا ہے۔ فنڈز والے انویسٹر کی رقم اور اس کی ضروریات کے مطابق مختلف شعبوں میں سے کسی ایک شعبہ کی طرف اس کی رہنمائی کرتے ہیں۔ فنڈز والے اس کی رقم کو بطور وکیل کے کل پانچ مدات میں لگاتے ہیں:
۱:-اسٹاک ایکسچینج
۲:-اسلامی بینکوں کے منافع بخش اکاؤنٹس
۳:-گوورنمنٹ کے صکوک
۴:-پرائیویٹ کمپنیوں کے صکوک
۵:-سونا اور چاندی کی مارکیٹ
اس خدمت کے عوض یہ ادارے فیس وصول کرتے ہیں۔ (بحوالہ فتوی نمبر: ۸۱۴۷، جاری شدہ از دارالافتاء جامعہ علوم اسلامیہ بنوری ٹاؤن کراچی، مورخہـ:۱۳-۰۴-۱۴۳۸ھ،۲۰۱۷-۰۱-۱۲ء )
ان اداروں میں سرمایہ کاری کے لیے شرعی حکم یہ ہے کہ اسلامی بینکو ں کے منافع بخش اکاؤنٹس، اور صکوک میں سرمایہ کاری کرنادرست نہیں، اس لیے کہ اس میں ایسے طریقوں اور حیلوں کو استعمال کیا جاتا ہے جن کو اسلامی کہنا یا سود سے پاک کہنا درست نہیں۔
البتہ پہلی مد جس میں کہ یہ ادارہ اسٹاک ایکسچینج میں سرمایہ کاری کرکے شیئرز کی خرید و فروخت کرتا ہے، اس میں کاروبار کرنے کے لیے شیئرز کے کاروبار کے سلسلے میں جو شرائط بیان کی جاتی ہیں ان کا لحاظ کرنا ضروری ہے۔ان شرائط کا خلاصہ یہ ہے کہ:
۱:-کمپنی کا اصل کاروبار حلال ہو، سودی کاروبار یا ممنوعہ چیزوں کا کاروبار نہ ہو۔
۲:-کمپنی کی غالب آمدنی حلال ہو۔
۳:- جب تک مشتری کے پاس شیئرز کا قبضہ نہ آئے تب تک اس کوآگے نہ بیچے۔ اور موجودہ زمانے کے قبضہ کے لیے ضروری ہے کہ سی ڈی سی کے اکاؤنٹس میں شیئرز مشتری کے نام منتقل ہو جائیں۔
۴:- شیئرز کی شارٹ سیل (یعنی مشتری کی ملکیت میں شیئر آنے سے پہلے آگے بیچنا) اور فارورڈ سیل ( یعنی بیع کومستقبل کے زمانے کی طرف نسبت کرنا) نہ کی جائے۔
۵:-اس کمپنی کے شیئرز کی مارکیٹ ویلیو مائع اثاثوں جیسے نقد کی قیمت سے زیادہ ہو۔
لہٰذا صورتِ مسئولہ میں اگر مذکورہ میوچل فنڈز والے ان شرائط کا لحاظ کرتے ہوں توسائل کے لیے اس ادارے کے شیئرز کی خرید وفروخت والے حصہ میں سرمایہ کاری کر نے کی گنجائش ہوسکتی ہے، مگر فی زمانہ اسٹاک مارکیٹ میں شیئرز کے کاروبار کے لیے بیان کردہ شرائط کا لحاظ نہیں رکھا جاتا، شرائط کے ساتھ اسٹاک ایکسچینج کے کاروبار کو جائز بتانے والے فتاویٰ کو صرف بیانِ جواز کے لیے استعمال کیا جاتا ہے، شرائط کے لحاظ کی کوئی ضمانت یا یقین دہانی نہیں ہوتی،اس لیے اسٹاک ایکسچینج کے کاروبار کے جواز کا فتویٰ مشکل ہورہا ہے۔
لہٰذا اسٹاک مارکیٹ کے شیئرز کی خرید و فروخت سے وابستہ مسلمانوں پر لازم ہے کہ وہ اپنے معاملات میں درج بالا شرائط کی موجودگی کی مکمل یقین دہانی حاصل کریں یا پھر اسٹاک مارکیٹ کے کاروبار سے علیحدہ رہیں:
’’فنقول من حکم المبیع إذا کان منقولا أن لایجوز بیعہٗ قبل القبض إلٰی أن قال وأما إذا تصرف فیہ مع بائعہٖ فإن باعہٗ منہ لم یجز بیعہ أصلا قبل القبض۔ ‘‘(الفتاوی الہندیۃ:ج:۳، ص:۱۳، الفصل الثالث فی معرفۃ المبیع والثمن والتصرف)
’’قال العلامۃ ابن عابدینؒ: وھو لایصح بہ القبض ۔۔۔۔۔ وقید بالقبض لأن العقد فی ذاتہٖ صحیح غیر أنہٗ لایجب علی المشتری دفع الثمن لعدم القبض۔‘‘            (ردالمحتار:ج:۴،ص:۴۸،مطلب اشتری داراماجورۃ لایطالب بالثمن قبل قبضہا)
’’آکل الربا وکاسب الحرام أہدی إلیہ أو أضافہ، وغالب مالہ حرام لا یقبل ولایأکل ما لم یخبرہ أن ذٰلک المال أصلہٗ حلال ورثہٗ أو استقرضہٗ، وإن کان غالب مالہٖ حلالا لا بأس بقبول ہدیتہٖ والأکل منہا۔‘‘ (ہندیۃ، کتاب الکراہیۃ، الباب الثانی عشر: فی الہدایا والضیافات، قدیم زکریا دیوبند ، ج:۵، ص:۳۴۳ ، جدید زکریا دیوبند،ج:۵،ص:۳۹۷ )
’’غالب مال المہدي إن کان حلالا لا باس بقبول ہدیتہٖ وأکل مالہٖ ما لم یتعین أنہٗ من حرام، وإن کان غالب مالہ الحرام لا یقبلہا ولا یأکل إلا إذا قال: إنہٗ حلال ورثہٗ أو استقرضہٗ۔‘‘ (بزازیۃ علی ہامش الہندیۃ، الکراہیۃ، الفصل الرابع: فی الہدیۃ والمیراث، قدیم زکریا دیوبند ،ج:۶، ص:۳۶۰ ، جدید زکریا دیوبند، ج:۳،ص:۲۰۳ )
’’وفی عیون المسائل: رجل أہدی إلٰی إنسان أو أضافہٗ إن کان غالب مالہٖ من حرام لا ینبغی أن یقبل ویأکل من طعامہٖ ما لم یخبر أن ذلک المال حلال استقرضہٗ أو ورثہٗ، وإن کان غالب مالہٖ من حلال فلا بأس بأن یقبل الہدیۃ ویأکل ما لم یتبین لہٗ أن ذٰلک من الحرام۔‘‘ (الفتاوی التاتارخانیۃ، الکراہیۃ، الفصل السابع عشر: فی الہدایا والضیافات، مکتبہ زکریا دیوبند، ج:۱۸، ص:۱۷۵ ، رقم:۲۸۴۰۵ ، مجمع الانہر، کتاب الکراہیۃ، فصل فی الکسب، ج:۴، ص:۱۸۶، دارالکتب العلمیۃ، بیروت)
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                               فقط واللہ اعلم
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        الجواب صحیح                الجواب صحیح                                  کتبہ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                 ابوبکر سعید الرحمن          محمد عبدالقادر                      محمد عمر رفیق 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                       الجواب صحیح                                                                   متخصصِ فقہِ اسلامی
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                          مفتی رفیق احمد بالاکوٹی                        جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے