بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 20 نومبر 2019 ء

بینات

 
 

اسٹیٹ بینک کی ملازمت!

اسٹیٹ بینک کی ملازمت!

کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام اس مسئلہ کے بارے میں کہ: ۱:۔۔۔۔۔اسٹیٹ بینک آف پاکستان کی ملازمت اختیار کرنا جائز ہے یا ناجائز؟ ۲:۔۔۔۔۔ اگر کسی شخص نے اسٹیٹ بینک کے ملازم سے کوئی تحفہ لے لیا ہو تو اُسے کس طرح واپس کیا جائے گا؟ ۳:۔۔۔۔۔ اسٹیٹ بینک کے تمام شعبے ناجائز ہیں یا کسی شعبے میں کام کرنے کی گنجائش ہے؟                                                           المستفتی: محمد ظفر ایوب، کراچی الجواب حامداً ومصلیاً ۱،۳:۔۔۔۔۔۔ بصورتِ مسئولہ اسٹیٹ بینک کے کسی بھی ایسے شعبہ میں ملازمت اختیار کرنا جائز نہیں ہے، جس میں سودی لین دین ہوتا ہو اور اگر اسٹیٹ بینک کے کسی شعبہ میں سودی کام نہ بھی ہوتا ہو، لیکن چونکہ اسٹیٹ بینک کے تمام ملازمین کو سودی رقم اور سودی آمدنی ہی سے تنخواہیں دی جاتی ہیں اسی بنا پر اس کے غیر سودی شعبہ (مثلاً: نوٹوں کی چھپائی وغیرہ) میں بھی کام کرنا جائز نہیں ہے۔ ۲:۔۔۔۔۔ صورتِ مسئولہ میں اگر اسٹیٹ بینک کے ملازم کی طرف سے کوئی تحفہ ملا ہو تو اسے اس ملازم کو لوٹانا واجب ہے، تاہم اگر لوٹانا دشوار ہو تو بغیر ثواب کی نیت کے کسی غریب کو دے دے، تاکہ حرام مال کے استعمال سے اس کا ذمہ فارغ ہوجائے۔قرآن کریم میں ہے: ’’وَأَحَلَّ اللّٰہُ الْبَیْعَ وَحَرَّمَ الرِّبٰوا۔‘‘                                  (البقرۃ:۲۷۵) الجامع الصحیح للامام مسلمؒ میں ہے: ’’عن جابر q قال: لعن رسول اللّٰہ a آکلَ الربا وموکلَہٗ وکاتبہٗ وشاہدیہ وقال:’’ہم سواء ۔‘‘                              (الجامع الصحیح للامام مسلمؒ ،ج:۲،ص:۲۷، ط:قدیمی) ’’فتاویٰ ہندیہ‘‘ میں ہے: ’’ولایجوز قبول ہدیۃ أمراء الجور لأن الغالب فی مالہم الحرمۃ إلا إذا علم أن أکثر مالہٖ حلال بأن کان صاحب تجارۃ أو زرع فلابأس بہ، لأن أموال الناس لاتخلو عن قلیل حرام فالمعتبر الغالب وکذا أکل طعامہم کذا فی الاختیار شرح المختار۔‘‘                  (فتاویٰ ہندیہ، الباب الثانی عشر،،ج:۵،ص: ۳۴۲، ط: رشیدیہ) فتاویٰ شامی میں ہے: ’’ ویردونہا علٰی أربابہا إن عرفوہم وإلا تصدقوا بہا لأن سبیل الکسب الخبیث التصدق إذا تعذر الرد علٰی صاحبہٖ۔‘‘ (فتاویٰ شامی ، ج:۶، ص:۳۸۵، کتاب الحظر والاباحۃ، فصل فی البیع، ط: سعید) معارف السنن للشیخ البنوریؒ میں ہے: ’’ قال شیخنا: ویستفاد من کتب فقہائنا ’’کالہدایۃ‘‘ وغیرہا أن من ملک بملک خبیث ولم یمکنہ الرد إلی المالک فسبیلہٗ التصدق علٰی الفقراء ۔۔۔۔۔۔ قال: والظاہر أن التصدق بمثلہٖ ینبغی أن ینوی بہٖ فراغ ذمتہٖ ولایرجو بہ المثوبۃ۔‘‘        (معارف السنن ،ج: ۱،ص:۳۴، ابواب الطہارۃ، باب ماجاء لاتقبل صلاۃ بغیر طہور، ط:سعید)                                                               فقط واللہ تعالیٰ اعلم            الجواب صحیح                  الجواب صحیح                        کتبہٗ          محمد انعام الحق                  محمد داؤد                       لائق رحیم                                                                  متخصص فقہ اسلامی                                                           جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے