بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

ویڈیو کو گواہی کے طور پر پیش کرنا


سوال

ویڈیو کی شرعی حیثیت کیا ہے؟کیا اسے بطور شہادت پیش کیا جا سکتا ہے؟ کیا ویڈیو دیکھنے والا گواہ بن سکتا ہے کہ میں نے اس آدمی کو ویڈیو میں یہ کام کرتے دیکھا ہے۔

جواب

جاندار کی ویڈیو بنانا اور دیکھنا حرام اور گناہ ہے اور اسے شریعت میں بطور شہادت پیش نہیں کیا جا سکتا،گواہی صرف آنکھوں دیکھے واقعہ پر دی جا سکتی ہے۔ نیزویڈیو میں ایڈیٹنگ کے ذریعے تبدیلیاں کی جاسکتی ہیں ۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143410200012

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے