بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

15 ربیع الثانی 1441ھ- 13 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

گزشتہ رمضان کے روزوں کی قضا کا حکم


سوال

زید گزشتہ رمضان میں عذر کی وجہ سے روزے نہیں رکھ پایا اور عذر رفع ہونے کے بعد قضا بھی نہیں کی یہاں تک اس سال کا رمضان آگیا۔اب زید کے لیے کیا حکم ہے ؟ گزشتہ روزوں کی قضا کرے یا اس سال کے روزے رکھے اور رمضان کے بعد گزشتہ رمضان کی قضا کرے؟

جواب

اگر کسی عذر کی وجہ سے رمضان کے روزے چھوٹ جائیں تو عذر رفع ہوتے ہی جلد از جلد ان کی قضا کرنی چاہیے۔اگلے رمضان تک گزشتہ سال کے روزوں کی قضا نہ کرنا ناپسندیدہ عمل ہے۔البتہ اگر کوئی شخص گزشتہ رمضان کے روزوں کی قضا نہ کرسکا، یہاں تک کہ آئندہ سال کا رمضان آگیا تو اب اسے پہلے رمضان کے فرض روزے رکھنے ہوں گے اور رمضان المبارک کے بعد گزشتہ روزوں کی قضا کرے گا۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143908200294

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے