بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

7 ربیع الثانی 1441ھ- 05 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

جھوٹی قسم کا کفارہ


سوال

جان یا مال و اسباب بچانے کے لئے اللہ کی جھوٹی قسم کھائی تو اس کے لئے کفارہ واجب ہے؟ جزا ک اللہ۔

 
 

جواب

جھوٹی قسم کھانا کبیرہ گناہے البتہ جان ومال کاخطرہ ہو تو ایسی صورت میں جان ومال کے تحفظ کے لیئے جھوٹی قسم کھانے کی نوبت آجائے تو صریح جھوٹ سےبچتے ہوئے گول مول الفاظ سے قسم کھالی جائے۔ واللہ اعلم

 
 


فتوی نمبر : 143601200015

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے