بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

10 ربیع الثانی 1441ھ- 08 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

گٹر کے فلٹر شدہ (صاف کئے گئے)پانی کا حکم!

 

گٹر کے فلٹر شدہ (صاف کئے گئے)پانی کا حکم!

کیا فرماتے ہیں علماء کرام ومفتیانِ عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ: ۱:…گندے گٹر کا پانی فلٹر اور مشینوں سے صاف کرکے جو قابل استعمال بنایا جاتا ہے اور لوگ اس کو طہارت کے لئے استعمال کرتے ہیں تو آیا اس طرح نجس گٹر وغیرہ کا پانی مشینوں کے ذریعے سے صاف کرنے سے پاک ہوجاتا ہے؟ آیا صاف کرنے سے نجس کی حقیقت وماہیت بدل جاتی ہے؟ یہ پانی طہارت کے قابل ہے یا نہیں؟ اس طرح کا پانی شرعاً پینا جائز ہے یا نہیں؟۔ ۲:…وہ ممالک جہاں پر زمین سے پانی نکالنے پر پابندی ہے اور دوسرا کوئی ذریعہ بھی نہیں تو کیا وہاں کے مسلمانوں کے لئے گٹر کا فلٹر شدہ پانی استعمال کرنا جائز ہے یا نہیں؟  وضاحت:یادرہے اس میں گٹر کا بول وبراز شامل ہوتا ہے، شریعت کی روشنی میں جواب عنایت فرمائیں۔                                    مستفتی:عبد المجید،امام جامع مسجد ’’اکابرین اسلام‘‘ الجواب باسمہٖ تعالیٰ ۱:… گٹر کے ناپاک پانی کو مشینوں کے ذریعہ صاف کرکے نجس پانی کی حقیقت وماہیت میں شرعاً ایسی قابل اعتبار تبدیلی پیدا نہیں ہوتی، جس کی بنیاد پرگٹر کے فلٹر شدہ پانی کو پاک کہا جاسکے اور اسے طہارت کی غرض سے یا کھانے پینے کے لئے استعمال کیا جاسکے۔ اس لئے کہ فلٹر شدہ پانی کی حقیقت صرف اتنی ہوتی ہے کہ فلٹر مشین کے ذریعہ ناپاک پانی کے بعض اجزاء الگ کرلئے جاتے ہیں، یہ بالکل ایسا ہے جیسا پھلوں یا پھولوں سے ان کا عرق الگ کرلینا اور اسے مطلوبہ مقاصد کے لئے استعمال کرنا۔چنانچہ’’ فتاویٰ شامی‘‘ میں ہے: ’’ثم اعلم أن العلۃ عند محمدؒ ہی التغیر وانقلاب الحقیقۃ… إن الدبس لیس فیہ انقلاب حقیقۃ، لأنہ عصیر جمد بالطبخ، وکذا السمسم إذا درس واختلط دہنہ بأجزائہ ففیہ تغیر وصف فقط، کلبن صار جبنا وبر صار طحینا وطحین صار خبزاً‘‘۔      (فتاویٰ شامی،۱؍۳۱۶،ط:سعید)  ’’شرح مختصر الطحاوی‘‘ میں ہے: ’’والدلیل علی تحریم استعمال الماء الذی فیہ جزء من النجاسۃ وإن لم یتغیر طعمہ أو لونہ أو رائحتہ، قول اﷲ تعالیٰ ’’وَیُحَرِّمُ عَلَیْہِمُ الْخَبَائِثَ‘‘ والنجاسات من الخبائث لأنہا محرمۃ‘‘۔            (شرح مختصر الطحاوی،۱؍۱۷،ط:رحمانیہ) ’’مراقی الفلاح ‘‘میں ہے: ’’المستقطر من النجاسۃ نجس‘‘ ۔                        (مراقی الفلاح،ص:۸۹) ’’البحر الرائق‘‘ میں ہے: ’’وذکر أبو الحسن الکرخیؒ أن کل من خالطہ النجس لایجوز الوضوء بہ ولوکان جاریا، ہو الصحیح‘‘۔                              (البحرالرائق ،۱؍۸۳،ط:سعید) ’’نظام الفتاویٰ ‘‘میں ہے: ’’پیشاب فلٹر کرنے سے پاک نہیں ہوسکتا ۔کشید کا حاصل تو صرف یہ ہے کہ پیشاب کے اندر سے اس کے متعفن اور مضرت رساں اجزاء کو نکال دیا گیا اور باقی جو اجزاء بچے، وہ اسی پیشاب کے اجزاء ہیں اور پیشاب بجمیع اجزاء نجس العین اور نجاست بنجاست غلیظہ ہے، اس لئے یہ باقی ماندہ اجزاء بھی نجس بنجاست غلیظہ ہی رہیں گے، اس میں تقلیب ماہیت کی کوئی صورت نہیں پائی گئی یہ تجریہ وتخرجہ ہوا،نہ کہ قلب ماہیت‘‘۔  (نظام الفتاویٰ ،۱؍۱۶،ماخوذ از ’’احکام شرعیہ میں تبدیلی حقیقت کے اثرات‘‘ ص:۴۱۳،ط: ادارۃ القرآن والعلوم الاسلامیہ) ’’آپ کے مسائل اور ان کا حل‘‘ میں ہے: ’’سوال: آج کل سائنس دانوں نے ایسا آلہ ایجاد کیا ہے کہ گندی نالیوں کے پانی کو صاف شفاف بنا دیتے ہیں، اس میں کوئی خرابی نظر نہیں آتی۔ اب کیا یہ پانی پلید ہوگا یا نہیں؟ جواب: صاف ہوجائے گا، پاک نہیں ہوگا۔ صاف اور پاک میں بڑا فرق ہے۔                                   (آپ کے مسائل اور اُن کا حل،۳؍۱۰۰،ط: مکتبہ لدھیانوی)‘‘ الغرض گٹر کے فلٹر شدہ پانی کو طہارت کے حصول اور خوردونوش کے طور پر استعمال کرنا شرعاً جائز نہیں ہے، کیونکہ پانی صاف ضرور ہوا ہے،پاک نہیں ہوا۔ ۲:…غیر مسلم ممالک میں جہاں زمین سے پانی نکالنے پر پابندی ہے اور وہاں گٹر اور گندے نالوں کے پانی کو فلٹر کرکے قابل استعمال بنایا جاتا ہے، وہاں رہنے والے مسلمانوں کے لئے بھی گٹر سے فلٹر شدہ پانی پینا اور طہارت کے لئے استعمال کرنا جائز نہیں ہے۔ ’’اَلْفِقْہُ الْإِسْلَامِیُّ وَأَدِلَّتُہٗ ‘‘میں ہے: ’’والمتنجس عند أکثر الفقہاء لاینتفع بہ ولایستعمل فی طہارۃ ولا فی غیرھا إلا فی نحو سقی بھیمۃ أو زرع أو فی حالۃ الضرورۃ کعطش ‘‘۔                                                                                     (کتاب الطہارۃ ،۱/۲۷۹ ،ط:رشیدیۃ) ’’فتاویٰ تاتارخانیہ‘‘ میں ہے: ’’یجوز للمسافر التیمم إذا لم یم یکن معہ ماء وکذلک إذا کان معہ وھو یخالف العطش علی نفسہ أو دابتہ لأنہ عاجز عن استعمال الماء حکماً لکونہ مستحقا لحاجتہ الأصلیۃ وفی الکافی وکذلک الماء نجساً‘‘۔                                                         (کتاب الطہارۃ، التیمم،۱/۲۴۲،ط:ادارۃ القرآن)                                      فقط واللہ اعلم              الجواب صحیح                   الجواب صحیح                کتبہ      محمد عبد المجید دین پوری            محمد عبد القادر            محمد اسحاق قریشی                                                           متخصصِ فقہِ اسلامی                                                  جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے