بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

11 ربیع الثانی 1441ھ- 09 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

کالا خضاب لگانے کا حکم

کالا خضاب لگانے کا حکم

    کیا فرماتے ہیں مفتیان کرام مندرجہ ذیل مسائل کے بارے میں کہ:     ۱-کالاخضاب لگانے والے کا کیا حکم ہے؟     ۲-کالا خضاب لگانے والے کے پیچھے اگر نماز پڑھ لی گئی تو نماز کا کیا حکم ہے؟     ۳-مختلف قسم کے رنگ جو سر اور داڑھی کے بالوں کے لیے استعمال کیے جاتے ہیں، ان کا کیا حکم ہے؟     براہِ کرم قرآن وسنت کی روشنی میں جواب عنایت فرماکر ممنون ومشکور فرمائیں۔مستفتی: محمد اسحاق،کراچی الجواب باسمہٖ تعالٰی     ۱:۔۔۔۔۔۔عمومی حالات میں کالاخضاب لگانا مکروہِ تحریمی ہے۔ مشکوٰۃ شریف میں ہے: ’’عن ابن عباسؓ عن النبی a قال: یکون قوم فی آخر الزمان یخضبون بہذا السواد کحواصل الحمام لایجدون رائحۃ الجنۃ‘‘۔          (رواہ ابوداؤد والنسائی،ص:۳۸۲،ط:قدیمی) ترجمہ:۔۔۔۔۔’’حضرت ابن عباس rفرماتے ہیں کہ: نبی کریم a نے فرمایا: آخر زمانہ میں ایک ایسی قوم ہوگی جو بالکل کالے رنگ سے خضاب لگائیںگے، جیساکہ کبوتر کا سینہ ہوتا ہے اور وہ جنت کی خوشبو کو نہیں سونگھ سکیں گی۔‘‘     بذل المجہود میں ہے: ’’وفی الحدیث تہدید شدید فی خضاب الشعر بالسواد وہو مکروہ کراہیۃ تحریم۔۔۔۔۔‘‘ (۶/۸۶)     ۲:۔۔۔۔۔۔ سیاہ خضاب لگانے والے کی اقتداء میں جونمازیں ادا کی گئیں وہ کراہت کے ساتھ ادا ہوگئیں، اعادے کی ضرورت نہیں۔     ۳:۔۔۔۔۔۔ داڑھی اور سر کے سفید بالوں کو سیاہ رنگ کے علاوہ دیگر رنگوں سے رنگنا پسندیدہ عمل ہے۔حدیث شریف میں ہے: ’’عن ابن عباسr قال: مر علٰی النبیِ a رجلٌ قد خضب بالحناء ، فقال: ما أحسن ہذا! قال: فمر آخر قد خضب بالحناء والکتم ، فقال: ہذا أحسن من ہذا ، ثم مرآخر قد خضب بالصفرۃ ، فقال: ہذا أحسن من ہذا کلہ۔ ۔۔۔۔۔۔ عن أبی ہریرۃ q قال: قال رسول اللّٰہ a: غیروا الشیب ولاتشبہوا بالیہود‘‘۔    (مشکوٰۃ، ص:۳۸۲،ط:قدیمی)          الجواب صحیح                الجواب صحیح                           کتبہٗ    محمد عبد المجید دین پوریؒ         محمد شفیق عارف                        عبد الحمید                                               دار الافتاء جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے