بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ربیع الثانی 1441ھ- 12 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

چھ کلموں کا ثبوت

چھ کلموں کا ثبوت

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اور مفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ: شش کلموں کا ثبوت ہے یا نہیں؟ ان کا نام اور رواج کب ہوا؟                                                              مستفتی:سید علی بن محمد اسلم الجواب حامداً ومصلیاً واضح رہے کہ چھ کلموں میں سے شروع کے چار کلموں کے الفاظ تو بعینہا احادیث سے ثابت ہیں اور باقی دو کلموں کے الفاظ مختلف احادیث سے لیے گئے ہیں۔ جب عقائد کی تدوین ہوئی تو اس زمانہ میں ان کے نام اور مروجہ ترتیب شروع ہوئی، تاکہ عوام کے عقائد درست ہوں اور اُن کو یاد کرکے ان مواقع میں پڑھنا آسان ہوجائے جن مواقع پر پڑھنے کی نبی کریم a نے تعلیم دی اور اس پر جو فضائل بیان کیے ہیں وہ بھی حاصل ہوجائیں۔ تاہم ان میں سے پہلے چار کلموں کے الفاظ تو بعینہا احادیث میں موجود ہیں، پانچویں اور چھٹے کلمے کے الفاظ مختلف احادیث میں متفرق موجود ہیں اور ان کے الفاظ کو ان مختلف ادعیہ سے لیا گیا ہے جو کہ احادیث میں موجود ہیں۔ پہلا کلمہ ’’کنز العمال‘‘ اور ’’مستدرک حاکم‘‘ میں، دوسرا کلمہ ’’ابن ماجہ‘‘ اور ’’بخاری‘‘ میں ، تیسرا کلمہ ’’مصنف ابن ابی شیبہ‘‘ اور ’’ابن ماجہ‘‘ میں، چوتھا کلمہ ’’مصنف عبد الرزاق الصنعانی‘‘، ’’مصنف ابن ابی شیبہ‘‘اور ’’ سنن ترمذی‘‘ میں موجود ہے اور بقیہ دو کلموںکے الفاظ متفرق مذکور ہیں، احادیث ملاحظہ ہوں: پہلا کلمہ کنز العمال میں ہے: ’’لما خلق اللّٰہ جنۃَ عدن وہی أول ما خلق اللّٰہ قال لہا: تکلمی ، قالت لا إلٰہ إلا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ قد أفلح المؤمنون قد أفلح من دخل فیھا و شقی من دخل النار۔‘‘              (کنز العمال،ج:۱،ص:۵۵، باب فی فضل الشہادتین، ط:موسسۃ الرسالۃ، بیروت) وفیہ أیضاً: ’’مکتوب علی العرش لا إلٰہ إلا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ لا أعذب من قالہا۔‘‘           (کنز العمال، ج:۱،ص:۵۷، باب فی فضل الشہادتین،ط:موسسۃ الرسالۃ، بیروت) ’’المستدرک علی الصحیحین للحاکم‘‘ میں ہے: ’’حدثنا علی بن حمشاذ العدل إملائً ثنا ہارون بن العباس الہاشمی، ثنا جندل بن والق، ثنا عمروبن أوس الأنصاری، ثنا سعید بن أبی عروبۃ عن قتادۃ، عن سعید بن المسیب عن ابن عباس رضی اللّٰہ عنہ قال:’’ أوحی اللّٰہ إلٰی عیسی علیہ السلام یا عیسی! آمن بمحمد وأمر من أدرکہ من أمتک أن یؤمنوا بہٖ فلولا محمد ما خلقت آدم ولولا محمد ما خلقت الجنۃ ولا النار ولقد خلقت العرش علی الماء فاضطرب فکتبت علیہ لا إلٰہ إلا اللّٰہ محمد رسول اللّٰہ فسکن۔‘‘ ہٰذا حدیث صحیح الإسناد۔‘‘                  (المستدرک علی الصحیحین للحاکم، ج:۲، ص:۶۷۱، حدیث:۴۲۲۷، دار الکتب العلمیہ بیروت) دوسرا کلمہ ابن ماجہ میں ہے: ’’حدثنا موسٰی بن عبد الرحمٰن قال: حدثنا الحسین بن علی ویزید بن الحباب ’’ح‘‘ وحدثنا محمد بن یحیٰی قال: حدثنا أبو نعیم قالوا: حدثنا عمرو بن عبد اللّٰہ بن وہب أبو سلیمان النخعیؒ، قال حدثنی زید العمی عن أنس بن مالکؓ، عن النبی a قال: من توضأ فأحسن الوضوئ، ثم قال ثلٰث مرات: أشہد أن لا إلٰہ إلا اللّٰہ وحدہٗ لاشریک لہٗ وأشہد أن محمدا عبدہٗ ورسولہٗ ، فتح لہٗ ثمانیۃ أبواب الجنۃ، من أیہا شاء دخل۔‘‘     (ابن ماجہ ، ج:۱،ص: ۱۵۹، حدیث:۴۶۹، دار احیاء الکتب العربیہ) بخاری شریف میں ہے: ’’حدثنا مسدد قال حدثنا یحی عن الأعمش، حدثنی شقیق عن عبد اللّٰہ، قال کنا إذا کنا مع النبی a فی الصلاۃ، قلنا: السلام علٰی اللّٰہ من عبادہٖ، السلام علٰی فلان وفلان فقال النبی صلی اللّٰہ علیہ وسلم: لاتقولوا السلام علی اللّٰہ فإن اللّٰہ ہوالسلام، ولکن قولوا: التحیات للّٰہ والصلوات والطیبات، السلام علیک أیہا النبی ورحمۃ اللّٰہ وبرکاتہ، السلام علینا وعلٰی عباد اللّٰہ الصالحین، فإنکم إذا قلتم أصاب کل عبد فی السماء أو بین السماء والأرض أشہد أن لا إلہ إلا اللّٰہ وأشہد أن محمدا عبدہٗ ورسولہٗ ، ثم یتخیر من الدعاء أعجبہ إلیہ فیدعو۔‘‘              (بخاری شریف، ج:۱، ص:۱۶۷، حدیث:۸۳۵، باب ما یتخیر الدعاء بعد التشہد، دار طوق النجاۃ) تیسرا کلمہ مصنف ابن ابی شیبہ میں ہے: ’’حدثنا أبو أسامۃ عن مسعر عن إبراہیم السکسی عن عبد اللّٰہ بن أبی أوفٰیؓ قال: أتٰی رجلٌ النبی a فذکر أنہٗ لایستطیع أن یأخذ من القرآن وسألہٗ شیئاً یجزئ من القرآن فقال لہ: ’’قل سبحان اللّٰہ والحمد للّٰہ ولا إلٰہ إلا اللّٰہ واللّٰہ اکبر ولاحول ولاقوۃ إلا باللّٰہ۔‘‘         (مصنف ابن ابی شیبہ،ج:۶،ص:۵۴،حدیث:۲۹۴۱۹، مکتبۃ الرشد، ریاض) سنن ابن ماجہ میں ہے: ’’حدثنا عبد الرحمن بن إبراہیم الدمشقی قال: حدثنا الولید بن مسلم قال: حدثنا الأوزاعی قال: حدثنی عمیر بن ہانئی قال حدثنی جنادۃ بن أبی أمیۃ عن عبادۃ بن الصامتؓ قال: قال رسول اللّٰہ a: ’’من تعار من اللیل فقال حین یتقیظ لا إلٰہ إلا اللّٰہ وحدہٗ لاشریک لہٗ لہ الملک ولہٗ الحمد وہو علٰی کل شیئ قدیر، سبحان اللّٰہ والحمد للّٰہ ولا إلٰہ إلا اللّٰہ واللّٰہ أکبر ولاحول ولاقوۃ إلا باللّٰہ العلی العظیم، ثم دعا رب اغفرلی غفر لہٗ قال الولید: أو قال: دعا استجیب لہٗ فإن قام فتوضأ ثم صلی قبلت صلا تہٗ۔‘‘         (سنن ابن ماجہ،ج:۲،ص:۱۲۷۶، حدیث:۳۸۷۸، دار احیاء الکتب العربیہ) چوتھا کلمہ ’’مصنف عبد الرزاق الصنعانی‘‘ میں ہے: ’’عن إسماعیل بن عیاش قال: أخبرنی عبد اللّٰہ بن عبد الرحمٰن بن أبی حسین ولیث عن شہر بن حوشب عن عبد الرحمٰن بن غنم عن رسول اللّٰہ a أنہٗ قال: ’’من قال دبر کل صلاۃ‘‘ قال ابن أبی حسین فی حدیثہٖ: وہو ثانی رجلہ قبل أن یتکلم ’’ لا إلٰہ إلا اللّٰہ وحدہ لاشریک لہٗ، لہ الملک ولہ الحمد، یحیٖی ویمیت بیدہ الخیر وہو علٰی کل شئ قدیر‘‘ عشر مرات کتب اللّٰہ لہٗ بکل واحدۃ عشر حسنات وحط عنہ عشر سیئات ورفع لہٗ عشر درجات۔‘‘                       (مصنف عبد الرزاق ،ج:۲،ص:۲۳۴،حدیث: ۳۱۹۲، المکتب الاسلامی، بیروت) ’’مصنف ابن ابی شیبہ‘‘ میں ہے: ’’أبوبکر قال: حدثنا وکیع، عن البصیر بن عدی، عن ابن أبی حسین قال: قال رسول اللّٰہ a: ’’أکبر دعائی ودعاء الأنبیاء قبلی بعرفۃ، لا إلٰہ إلا اللّٰہ وحدہٗ لاشریک لہٗ ، لہ الملک ولہ الحمد بیدہ الخیر یحیٖی ویمیت، وہو علٰی کل شئ قدیر۔‘‘           (مصنف ابن ابی شیبہ، ج:۳، ص:۳۸۲، حدیث:۱۵۱۳۶، مکتبۃ الرشد، ریاض) پانچواں کلمہ پانچویں کلمہ کے الفاظ یکجا تو موجود نہیں، البتہ متفرق جگہوں پر مذکور ہیں جس کی تفصیل یہ ہے، ’’بخاری شریف‘‘ میں ہے: ’’حدثنا ابو معمر حدثنا عبد الوارث حدثنا الحسین، حدثنا عبد اللّٰہ بن بریدۃ قال: حدثنی بشیر بن کعب العدوی قال: حدثنی شداد بن أوس رضی اللّٰہ عنہ عن النبی a ’’سید الاستغفار أن تقول: أللّٰہم أنت ربی لا إلٰہ إلا أنت خلقتنی وأنا عبدک وأنا علی عہدک ووعدک ما استطعت أعوذ بک من شر ما صنعت أبوء لک بنعمتک علی وأبوء لک بذنبی فاغفرلی، فإنہ لایغفر الذنوب إلا أنت۔‘‘          ( بخاری شریف،ج:۸،ص:۶۷، حدیث: ۶۳۰۶،باب افضل الاستغفار، دار طوق النجاۃ) ’’مصنف ابن ابی شیبہ‘‘ میں ہے: ’’حدثنا عیسٰی بن یونس، عن الأوزاعی، عن حسان بن عطیۃ عن شداد بن أوس، أنہٗ قال: احفظوا عنی ما أقول: سمعت رسول اللّٰہ a یقول:’’ إذا کنز الناس الذہب والفضۃ فاکنزوا ہذہ الکلمات، أللّٰہم إنی أسألک شکر نعمتک وأسألک حسن عبادتک، وأسألک قلبا سلیما وأسألک لسانا صادقا، وأسألک من خیر ما تعلم، وأعوذ بک من شر ما تعلم وأستغفرک لما تعلم، إنک أنت علام الغیوب۔‘‘                                (مصنف ابن ابی شیبہ،ج:۶،ص:۴۶،حدیث:۲۹۳۵۸، مکتبۃ الرشد، ریاض) ’’ہٰکذا فی الترمذی والنسائی: عن عمران بن حسین…قل: أللّٰہم اغفرلی ما أسررت وما أعلنت وما أخطأت وماتعمدت وما جہلت وما علمت۔‘‘                                            (۲/۱۲۵۶،حدیث:۳۸۲۴، دار احیاء الکتب العربیہ) سنن ابن ماجہ میں ہے: ’’حدثنا محمد بن الصباح قال: انبأنا جریر عن عاصم الأحول، عن أبی عثمان عن أبی موسٰی قال: سمعنی النبی a وأنا أقول: لاحول ولاقوۃ إلا باللّٰہ، قال: یا عبد اللّٰہ بن قیس! ألا أدلک علی کلمۃ من کنوز الجنۃ؟ قلت: بلٰی یا رسول اللّٰہ! قال: قل: ’’لاحول ولاقوۃ إلا باللّٰہ۔‘‘         (سنن ابن ماجہ ،ج:۲،ص:۱۲۵۶،حدیث:۳۸۲۴، داراحیاء الکتب العربیہ) چھٹا کلمہ  چھٹے کلمے کے الفاظ بھی متفرق طور پر احادیث میں موجود ہیں، تفصیل درج ذیل ہے، ’’الادب المفرد‘‘ میں ہے: ’’قال سمعت معقل بن یسار یقول: انطلقت مع أبی بکر الصدیقؓ إلی النبی a فقال: یا أبابکر! الشرک فیکم أخفی من دبیب النمل فقال أبوبکر: وہل الشرک إلا من جعل مع اللّٰہ إلٰہا آخر ، فقال النبی a: والذی نفسی بیدہ الشرک أخفٰی من دبیب النمل، ألا أدلک علی شیئ إذا قلتہٗ ذہب عنک قلیلہٗ وکثیرہٗ قال: قل :’’اللّٰہم إنی أعوذ بک أن أشرک بک وأنا أعلم وأستغفرک لما لا أعلم۔‘‘(الادب المفرد، ج:۱،ص:۲۵۰، باب فضل الدعائ، دارالبشائر الاسلامیۃ) ’’کنز العمال‘‘ میں ہے: ’’الصدیق رضی اللّٰہ عنہ عن معقل بن یسار … قل:’’ أللّٰہم إنی أعوذ بک أن أشرک بک وأنا أعلم وأستغفرک لمالا أعلم۔‘‘                  (کنز العمال،ج:۳،ص:۸۱۶،الباب الثانی فی الاختلاف المذموم،ط:مکتبۃ المدینۃ) ’’الادب المفرد‘‘ میں ہے: ’’قال حدثنی عبد الرحمٰن بن أبی بکرۃ أنہٗ قال لابنہٖ: یا أبت إنی أسمعک تدعو کل غداۃ ’’ أللّٰہم عافنی فی بدنی ، أللّٰہم عافنی فی سمعی … وتقول: ’’أللّٰہم إنی أعوذ بک من الکفر والفقر…الخ۔‘‘                       (الادب المفرد، ج:۱، ص:۲۴۴، باب الدعاء عند الکرب، دار البشائر الاسلامیۃ، بیروت) ’’المعجم الاوسط ‘‘ میں ہے: ’’عن عروۃ عن عائشۃؓ أن رسول اللّٰہ a کان یدعو فی الصلاۃ:’’ أللّٰہم إنی أعوذ بک من المأثم والمغرم ‘‘ فقالوا ما أکثر ما تستعیذ من المغرم فقال: إن الرجل إذ غرم حدث فکذب ووعد فأخلف۔‘‘   (المعجم الاوسط،ج:۵،ص:۳۹، باب من اسمہ عبد اللہ، دار الحرمین قاہرہ) ’’الدعاء للطبرانی‘‘ میں ہے: ’’عن علقمۃ عن عبد اللّٰہؓ قال: کان رسول اللّٰہ a إذا صلی أقبل علینا بوجہہٖ کالقمر، فیقول:’’ أللّٰہم إنی أعوذ بک من الہم والحزن والعجز والکسل والذل والصغار والفواحش ما ظہر منہا وبطن…الخ۔‘‘                     (الدعاء للطبرانی،ج:۱،ص:۲۱۰،باب القول عند الاذان، ط: دار الکتب العلمیۃ، بیروت) ’’المستدرک للحاکم‘‘ میں ہے: ’’عن ابن عباسؓ أنہ بینما ہو جالس عند رسول اللّٰہ a إذ جاء ہٗ علی بن أبی طالبؓ… ثم قل آخر ذلک:’’ أللّٰہم ارحمنی أن تکلف مالا یعیننی وارزقنی حسن النظر فیما یرضیک عنی…۔‘‘           (المستدرک للحاکم،ج:۱،ص:۳۱۵، بیرت)                                                                                                        فقط واللہ اعلم       الجواب صحیح         الجواب صحیح        الجواب صحیح                   کتبہ    ابوبکرسعید الرحمن     محمد انعام الحق         محمد داؤد                 عبد الرزاق                                                                  متخصصِ فقہِ اسلامی                                                        جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے