بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ربیع الثانی 1441ھ- 12 دسمبر 2019 ء

بینات

 
 

بلا احرام بار بار حرم جانے والے کا حکم!

بلا احرام بار بار حرم جانے والے کا حکم!

کیا فرماتے ہیں علمائے کرام اور مفتیان عظام اس مسئلہ کے بارے میں کہ:  بغیر احرام کے حرم میں داخلہ کا کیا حکم ہے؟ کثیر آمد ورفت والے کے لیے لزوم احرام کی شرط کا کیا حکم ہے؟                                                        مستفتی:الطاف ادارۃ النور الجواب حامداً ومصلیاً واضح رہے کہ اگر کوئی عاقل بالغ مرد یا عورت جو میقات سے باہر رہنے والا ہے اور مکہ مکرمہ میں داخل ہونے کا ارادہ رکھتا ہے، خواہ حج یا عمرہ کی نیت سے یا کسی اور غرض سے تو اس پر میقات سے احرام باندھنا لازم ہے، اور اگر بغیر احرام کے میقات سے گزر گیا تو گناہ گار ہوگا اور اس کو میقات پر دوبارہ آکر احرام باندھنا واجب ہے، اگر دوبارہ میقات پر نہیں آیا تو اس پر ایک دم لازم ہوجائے گا۔ لہٰذا صورتِ مسئولہ میں جو شخص احرام کے بغیر مکہ مکرمہ چلاجائے تو اس پر حج یا عمرہ اور ایک دم لازم ہوگا اور اگر کئی بار احرام کے بغیر میقات گزر جائے تو ہر بار ایک حج یا عمرہ واجب ہوگا اور ایک دم بھی واجب ہوگا۔ البتہ ڈرائیور، تاجر، دفاتر میں کام کرنے والے اور دیگر پیشہ وارانہ کام کرنے والے جنہیں ہر دوسرے تیسرے دن، کبھی ہر روز اور بسا اوقات ایک دن میں کئی بار حرم میں داخل ہونا پڑتا ہے، ایسے لوگوں پر ہربار حرم میں داخلہ کے لیے احرام کی پابندی بے حد مشکل اور دشوار ہے، اس لیے ان حضرات کے لیے احرام کے بغیر بھی حرم کے حدود میں داخل ہونے کی گنجائش ہے، دم دینا یا عمرہ کرنا لازم نہیں ہے، اگرچہ احرام باندھ کر آنا بہتر ہے۔اور جو لوگ روزانہ نہیں آتے، کبھی کبھار آتے ہیں، اُن کے لیے احرام باندھ کر آنا لازم ہے۔ احرام کے بغیر حرم میں داخل ہونے کی صورت میں ایک حج یا عمرہ واجب ہوگا اور ایک دم بھی واجب ہوگا۔ ’’غنیۃ المناسک‘‘ میں ہے: ’’آفاقی مسلم مکلف أراد جخول مکۃ أو الحرم ولو لتجارۃ أو سیاحۃ وجاوز آخر مواقیتہٖ غیر محرم ثم أحرم أو لم یحرم أَثِمَ ولزمہٗ دمٌ وعلیہ العود إلٰی میقاتہٖ الذی جاوزہٗ أو إلٰی غیرہٖ أقرب أو أبعد، و إلٰی میقاتہ الذی جاوزہ أفضل وعن أبی یوسفؒ: إن کان الذی یرجع إلیہ محاذیا لمیقاتہ الذی جاوزہ أو أبعد منہ سقط الدم وإلا فلا، فإن لم یعد ولا عذر لہٗ أثم آخری لترکہ العود الواجب۔‘‘ (غنیۃ المناسک، ص:۶۰، باب مجاوزۃ المیقات بغیر احرام، ط:ادارۃ القرآن) ’’فتاوی شامی‘‘ میں ہے: ’’(آفاقی) مسلم بالغ (یرید الحج) ولو نفلا (أو العمرۃ) فلو لم یرد واحدا منہما لایجب علیہ دم بمجاوزۃ المیقات، وإن وجب حج أو عمرۃ إن أراد دخول مکۃ أو الحرم۔ (قولہ یرید الحج أو العمرۃ) کذا قالہٗ صدر الشریعۃ، وتبعہٗ صاحب الدرر وابن کمال باشا، ولیس بصحیح لما نذکر، ومنشأ ذٰلک قول الہدایۃ: وہذا الذی ذکرنا أی من لزوم الدم بالمجاوزۃ إن کان یرید الحج أو العمرۃ، إإن کان دخل البستان لحاجۃ فلہٗ أن یدخل مکۃ بغیر إحرام۔ الخ قال فی الفتح: یوہم ظاہرہٗ أن ما ذکرنا من أنہ إذا جاوز غیر محرم وجب الدم إلا أن یتلافاہ، محلہٗ ما إذا قصد النسک، فإن قصد التجارۃ أو السیاحۃ لا شیئ علیہ بعد الإحرام ولیس کذٰلک لأن جمیع الکتب ناطقۃ بلزوم الإحرام علٰی من قصد مکۃ سواء قصد النسک أم لا، وقد صرح بہ المصنف أی صاحب الہدایۃ فی فعل المواقیت، فیجب أن یحمل علی أن الغالب فیمن قصد مکۃ من الآفاقیین قصد النسک، فالمراد بقولہ إذا أراد الحج أو العمرۃ إذا أراد مکۃ۔الخ ملخصا من ح عن الشرنبلالیۃ، ولیس المراد بمکۃ خصوصہا، بل قصد الحرم مطلقا موجب للإحرام کما مر قبیل فصل الإحرام، وصرح بہ فی الفتح وغیرہ۔‘‘                                 (فتاویٰ شامی، ج:۲،ص:۵۷۹، کتاب الحج، ط:سعید) فتاویٰ عالمگیری میں ہے: ’’ولو جاوز المیقات قاصدا مکۃ بغیر إحرام مرارا فإنہٗ یجب علیہ لکل مرۃ إما حجۃ أو عمرۃ۔‘‘                 (فتاویٰ عالمگیری ،ج:۱،ص:۲۵۳، کتاب المناسک،ط:رشدیہ) ’’مصنف ابن ابی شیبۃ ‘‘میں ہے: ’’حدثنا علی بن ہاشم، ووکیع، عن طلحۃ، عن ابن عباسؓ قال: لایدخل أحد مکۃ بغیر إحرام، إلا الحطابین العجالین وأہل منافعہا ۔۔۔۔۔۔۔۔ حدثنا حفص، عن عبد الملک، عن عطاء قال:’’ لیس لأحد أن یدخل مکۃ إلا بإحرام‘‘ وکان عبد الملک یرخص للحطابین۔‘‘ (مصنف ابن ابی شیبۃ، ج:۳،ص:۲۰۹، کتاب الحج، باب من کرہ ان یدخل مکۃ بغیر احرام، ط:دار التاج) ’’نخب الافکار فی تنقیح مبانی الاخبار ‘‘میں ہے: ’’وأخرج ابن أبی شیبۃ فی مصنفہٖ: ثنا علی بن ہاشم، ووکیع، عن طلحۃ، عن ابن عباسؓ قال: لایدخل أحد مکۃ بغیر إحرام، إلا الحطابین، والعمالین، وأہل منافعہا۔‘‘ (نخب الافکار فی تنقیح مبانی الاخبار،ج:۱۳،ص:۵۴۴، کتاب مناسک الحج، دخول الحرم ہل یصلح بغیر احرام،ط:دار المنہاج) ’’معرفۃ السنن والآثار‘‘ میں ہے: ’’أخبرنا أبو سعید قال: حدثنا أبو العباس قال: أخبرنا الربیع قال: قال الشافعیؒ: وأکرہ لکل من دخل مکۃ من الحل من أہلہا وغیر أہلہا أن لایدخلہا إلا محرما، وإن کثر اختلافہ إلا الذین یدخلونہا فی کل یوم من خدم أہلہا من الحطابین وغیرہم، فإنی أرخص لأولئک أن یدخلوہا بغیر إحرام، ویحرموا فی بعض السنۃ إحراما واحدا، ولو أحرموا أکثر منہ کان أحب إِلَیَّ۔ (معرفۃ السنن والآثار،ج:۷،ص:۳۸۲، دخول مکۃ بغیر ارادۃ حج ولا عمرۃ، دار قتیبۃ، دمشق،بیروت) ’’عمدۃ القاری شرح صحیح البخاری‘‘ میں ہے: ’’واختلف قول مالکؒ والشافعیؒ فی جواز دخول مکۃ بغیر إحرام لمن لم یرد الحج والعمرۃ، فقالا مرۃ: لایجوز دخولہا إلا بالإحرام لاختصاصہا ومباینتہا جمیع البلدان إلا الحطابین، ومن قرب منہا مثل جدۃ والطائف وعسفان لکثرۃ ترددہم إلیہا، وبہٖ قال أبو حنیفۃؒ واللیثؒ، وعلی ہٰذا فلا دم علیہ ، نص علیہ فی (المدونۃ) وقالا مرۃ أخری: دخولہا بہٖ مستحب لا واجب ، قلت: مذہب الزہریؒ والحسن البصریؒ والشافعیؒ فی قول، ومالکؒ فی روایۃ، وابن وہبؒ وداود بن علیؒ وأصحابہ الظاہریۃ: أنہ لابأس بدخول الحرم بغیر إحرام، ومذہب عطاء بن أبی رباحؒ واللیث بن سعدؒ والثوریؒ وأبی حنیفۃؒ وأصحابہٖ ومالکؒ فی روایۃ، وہی قولہ الصحیح، والشافعیؒ فی المشہور عنہ وأحمد وأبی ثور والحسن بن حی: لایصلح لأحد کان منزلہ من وراء المیقات إلی الأمصار أن یدخل مکۃ إلا بالإحرام، فإن لم یفعل أساء ولا شیئ علیہ عند الشافعیؒ وأبی ثورؒ، وعند أبی حنیفۃؒ: علیہ حجۃ أو عمرۃ۔ وقال أبو عمر: لاأعلم خلافا بین فقہاء الأمصار فی الحطابین ومن یدمن الاختلاف إلٰی مکۃ ویکثرہٗ فی الیوم واللیلۃ أنہم لایأمرون بذٰلک لما علیہم من المشقۃ، وقال ابن وہبؒ عن مالکؒ: لست آخذ بقول ابن شہاب فی دخول الإنسان مکۃ بغیر إحرام، وقال: إنما یکون ذٰلک علی مثل ما عمل بہ عبد اللّٰہ بن عمرؓ من القرب إلا رجلا یأتی بالفاکہۃ من الطائف، أو ینقل الحطب یبیعہٗ، فلا أری بذٰلک بأساً۔‘‘ (عمدۃ القاری شرح صحیح البخاری،ج:۷،ص:۵۳۵، کتاب المناسک، باب دخول الحرم ومکۃبغیر احرام، ط: دار الحدیث ملتان) ’’العرف الشذی شرح سنن الترمذی‘‘ میں ہے: ’’ثم قال أبوحنیفۃؒ: من مر علی المیقات مریداً مکۃ یجب علیہ الإحرام أراد الحج أو العمرۃ أو لا إلا الحطابین أو الحشاشین۔‘‘ (العرف الشذی شرح سنن الترمذی،ج:۲،ص:۲۲۹، باب ماجا فی مواقیت الاحرام للآفاقی، ط:دار التراث العربی، بیروت، لبنان)              فقط واللہ اعلم      الجواب صحیح           الجواب صحیح       الجواب صحیح                  کتبہ   ابوبکر سعید الرحمن       محمد انعام الحق      شعیب عالم               محمد حمزہ منصور                                                                 متخصص فقہ اسلامی                                                       جامعہ علوم اسلامیہ علامہ بنوری ٹاؤن کراچی

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے