بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 12 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

۱۰۰۰۰ قیمت والی چیز قسطوں پر ۱۵۰۰۰ میں خریدنے کا حکم


سوال

قسطوں پر کوئی چیزخریدنا کیسا ہے، مثلاً:  اگر کوئی چیز  10000 کی ہے اور قسطوں پر 15000 دینے پڑیں تو کیا حکم ہے؟

جواب

قسطوں میں رقم کی ادائیگی کی شرط پر کوئی بھی چیز خریدنا جائز ہے، جس چیز کی قیمت دس ہزار روپے ہو اس چیز کو ادھار میں قسطوں پر پندرہ ہزار روپے میں خریدنا جائز ہے، بشرطیکہ عقد کے وقت قسطوں کی ادائیگی کی مدت اور چیز  کی حتمی قیمت طے کرلی جائے، اور قسطوں کی ادائیگی میں تاخیر ہونے کی صورت میں پیسوں میں اضافہ کی شرط نہ لگائی جائے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144012201309

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے