بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ذو القعدة 1441ھ- 05 جولائی 2020 ء

دارالافتاء

 

دلی اور ذہنی طور پر چھوڑ چکاہوں کہنے سے طلاق کا حکم


سوال

میری بیوی سے کچھ ناراضگی ہوئی ہے، جس کے بعد میں نے اپنے گھر والوں کو کہا کہ میں دلی اور ذہنی طور پہ بیوی کو چھوڑ چکا ہوں، لیکن ان الفاظ سے طلاق کا ارادہ نہیں بلکہ اس سے بیزاری ظاہر کرنا مقصد تھا، راہ نمائی فرمائیں کہ ان الفاظ کا کیا حکم ہے؟

جواب

جب آپ نے اپنے گھر والوں سے یہ کہا کہ میں دلی اور ذہنی طور پہ بیوی کو چھوڑ چکا ہوں تو اس سے آپ کی بیوی پر کوئی طلاق واقع نہیں ہوئی، نکاح بدستور قائم ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144001200266

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں