بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

18 ربیع الثانی 1441ھ- 16 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

نماز کے بعد سر پر ہاتھ رکھ کر دعا پڑھنے کاحوالہ


سوال

نماز کے بعد جو سر پرہاتھ رکھ کر دعا پڑھی جاتی ہے، کیا یہ احادیث سے ثابت ہے ؟ برائے مہربانی حوالہ دے دیں۔

جواب

امام طبرانی رحمہ اللہ نے اپنی کتاب "الدعاء"   اور "المعجم الاوسط"میں حضرت انس رضی اللہ عنہ سے روایت نقل کی  ہے کہ نبی کریم ﷺ جب نماز سے فارغ ہوتے تو اپنے دائیں ہاتھ کو سر پر پھیر کر یہ دعا پڑھتے:

                                                                                        "بسم الله الذي لا إله ألا هو الرحمن الرحيم اللهم أذهب عني الهم والحزن".

اس روایت کو نقل کرنے کے بعد علامہ نور الدین ہیثمی رحمہ اللہ :"مجمع الزوائد" میں لکھتے ہیں کہ : "اس روایت کو امام طبرانی نے المعجم الاوسط میں اور  امام بزار نے اپنی اپنی سندوں کے ساتھ بیان کیا ہے، اس میں ایک راوی زید العمی ہیں ، کئی محدثین نے انہیں ثقہ بیان کیا ہے، جب کہ جمہور نے انہیں ضعیف کہا ہے، طبرانی کی ایک سندکے بقیہ رجال ثقہ ہیں، جب کہ دوسری کے بعض میں اختلاف ہے۔"

الدعاء للطبراني 360 - (1 / 209):

"عن أنس بن مالك رضي الله عنه أن النبي صلى الله عليه وسلم كان إذا صلى وفرغ من صلاته مسح بيمينه على رأسه وقال: بسم الله الذي لا إله غيره الرحمن الرحيم اللهم أذهب عني الهم والحزن".

المعجم الأوسط - (3 / 289):

"وبه أن النبي صلى الله عليه و سلم كان إذا صلى وفرغ من صلاته مسح بيمينه على رأسه وقال: بسم الله الذي لا إله ألا هو الرحمن الرحيم اللهم أذهب عني الهم والحزن".

مجمع الزوائد ومنبع الفوائد . (10 / 63):

"وعن أنس بن مالك أن النبي صلى الله عليه وسلم كان إذا صلى وفرغ من صلاته مسح بيمينه على رأسه وقال:"بسم الله الذي لا إله إلا هو الرحمن الرحيم، اللهم أذهب عني الهم والحزن".

وفي رواية: مسح جبهته بيده اليمنى وقال فيها: "اللهم أذهب عني الهم والحزن".

رواه الطبراني في الأوسط والبزار بنحوه بأسانيد، وفيه زيد العمى وقد وثقه غير واحد وضعفه الجمهور، وبقية رجال أحد إسنادي الطبراني ثقات وفي بعضهم خلاف".  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144012201400

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے