بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

8 شوال 1441ھ- 31 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

میری جائیداد آپ کی ہے کہنے سے ملکیت ثابت نہیں ہوتی


سوال

رابعہ بی بی زوجہ شاہ جہان جو کہ شوہر اور بیٹوں کے بعد وفات پائی ہو،  ان کے 2 دو بیٹے تھے، جن کی اولاد تاحال زندہ ہے، پہلے بیٹے کے 3 بیٹے اور 4 بیٹیاں ہیں۔ دوسرے بیٹے کا1 بیٹا اور 1 بیٹی ہے۔ رابعہ بی بی نے اپنے ایک پوتے سے کہا تھا کہ: میری جائیداد آپ کی ہے۔اب رابعہ بی بی کی وفات کے بعد جائیداد اس پوتے کی ہوگی یا باقی پوتوں کو بھی حصہ ملے گا؟

جواب

دادی کا اپنے پوتے سے یہ کہناکہ : ''میری جائیداد آپ کی ہے''، صرف اتنا کہنے سے  جائیداد پوتے کی ملکیت نہیں بنے گی، بلکہ بدستور زوجہ شاہ جہان کی ملکیت رہے گی؛ اس لیے رابعہ بی بی کی جائیداد اس کے تمام ورثاء میں شرعی اعتبار سے تقسیم ہوگی۔

واضح رہے کہ جس طرح لڑکے وارث بنتے ہیں اسی طرح شریعت میں لڑکیوں کا حصہ بھی مقرر ہے ، لہذا مرحومہ کے پوتوں کے ساتھ   پوتیاں بھی مرحومہ کی وارث بنیں گی۔اگر رابعہ بی بی کے ورثاء صرف مذکورہ بالاپوتے اور پوتیاں ہیں توان میں وراثت کی تقسیم درج ذیل تناسب سے ہوگی:

مرحومہ کے کل ترکہ کو 13حصوں میں تقسیم کرکے دو،دو حصے ہر ایک پوتے کو اور ایک،ایک حصہ ہر ایک پوتی کو دیا جائے گا۔یعنی سو روپے میں سے 15٫38 روپے ہر ایک پوتے کو اور 7٫69 روپے ہر ایک پوتی کو ملیں گے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143902200045

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے