بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

9 ربیع الثانی 1441ھ- 07 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

مقتدی کا امام کے پیچھے سورہ فاتحہ پڑھنا


سوال

 کیا کسی بھی وقت کی باجماعت نماز میں مقتدی امام کے پیچھے سورۃ الفاتحہ پڑھے گا؟

جواب

امام کی اقتدا میں خاموش رہناضروری ہے،خواہ جہری نمازہویاسری، زبان سے قراءت کی اجازت نہیں، البتہ دل ہی دل میں سورۂ فاتحہ کے الفاظ کی جانب متوجہ رہنے کو حضرت تھانوی رحمہ اللہ  نے مستحسن لکھاہے۔ چناں چہ ایک سالک کے خط کے جواب میں لکھتے ہیں:

’’(سری نماز میں قلب کا خود بخود ذکر کی جانب مائل ہوجانا) پسندیدہ حالت ہے، اس میں تبدیلی کی ضرورت نہیں، ہاں! زبان کو حرکت نہ ہو۔ اوراگردوسرے اذکارکے بجائے سورہ فاتحہ کے الفاظ کاخیال ہو توزیادہ بہترہے‘‘۔ (تربیت السالک جلدسوم،ص:275،ط:زمزم پبلشرز) فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144012201923

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے