بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 شعبان 1441ھ- 07 اپریل 2020 ء

دارالافتاء

 

مدرسہ کا مہہتم کا اپنے لیے تنخواہ مقرر کرنا


سوال

 مدرسہ کا مہتمم اپنے لیے  تنخواہ مقرر کر سکتا ہے؟

جواب

مدرسہ کا مہتمم ضابطہ وعرف کے مطابق تنخواہ لے سکتا ہے، تاہم  تنخواہ کا  تعین مدرسہ کی مجلس شوری سے کرائے   یا  مالیات  کے  شعبہ میں ایک دو مخلص دیانت دار ساتھیوں کو مقرر کرے اور مالی معاملات اور تنخواہیں سب کے مشورے سے متعین کی جائیں ، اگر از خود کرے  گا تو تہمت  اور اعتراض کا خطرہ ہے جس سے بچنا ضروری ہے۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143908200448

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے