بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 شعبان 1441ھ- 06 اپریل 2020 ء

دارالافتاء

 

لا تدعوھما ولو طردتکم الخیل حدیث کی تحقیق


سوال

سنن ابی داؤد کی درج ذیل حدیث کی صحت کے بارے میں اہلِ علم کی کیا رائے ہے جب کہ شیخ البانی اس حدیث کو ضعیف کہتے ہیں۔

ترجمہ: حضرت ابوہریرہ رضی اللہ عنہ سے مروی ہے کہ رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم نے فرمایا: فجر  کی دوسنتوں کو نہ چھوڑو خواہ تمہیں گھوڑے روند ڈالیں۔

جواب

مذکورہ روایت کی سند پر محدثین نے  اگرچہ کچھ کلام کیا ہے اس کے ایک راوی "ابن سیلان" کے غیر معروف ہونے کی وجہ سے، لیکن حدیث کے مضمون ومفہوم(فجر کی دو سنتوں کی تاکید) کی بکثرت احادیثِ صحیحہ سے تائید ہوتی ہے، نیز اس روایت کی ایک سند مقبول بھی ہے ؛ اس لیے اس کو مستقلاً ضعیف نہیں کہا جاسکتا، بلکہ دیگر صحیح احادیث اور امت کے تلقی بالقبول کی وجہ سے یہ روایت مقبول ہوگی۔

"حَدِيثُ سُنَّةِ الْفَجْرِ: أَخْرَجَهُ أَبُو دَاوُد عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ قَالَ: قَالَ رَسُولُ اللَّهِ صَلَّى اللَّهُ عَلَيْهِ وَسَلَّمَ : «لَا تَدَعُوهُمَا وَإِنْ طَرَدَتْكُمْ الْخَيْلُ»، وَفِيهِ ابْنُ سَيْلَانَ -بِمُهْمَلَةٍ مَكْسُورَةٍ وَيَاءٍ سَاكِنَةٍ وَنُونٍ-، قَالَ ابْنُ الْقَطَّانِ: لَا نَدْرِي أَهُوَ عَبْدُ رَبِّهِ بْنُ سَيْلَانَ أَوْ هُوَ جَابِرُ بْنُ سَيْلَانَ؟ وَأَيُّهُمَا كَانَ فَحَالُهُ مَجْهُولٌ لَا يُعْرَفُ، لَكِنْ صَرَّحَ الْمُنْذِرِيُّ فِي مُخْتَصَرِهِ بِمَا عَيَّنَهُ عَبْدُ الْحَقِّ مِنْ أَنَّهُ عَبْدُ رَبِّهِ وَقَالَ: هَكَذَا جَاءَ مُسَمًّى فِي بَعْضِ طُرُقِهِ، وَقَدْ رَوَاهُ ابْنُ الْمُنْكَدِرِ عَنْ أَبِي هُرَيْرَةَ وَفِيهِ عَبْدُ الرَّحْمَنِ بْنُ إِسْحَاقَ الْمَدَنِيُّ أَبُو شَيْبَةَ الْوَاسِطِيُّ، أَخْرَجَ لَهُ مُسْلِمٌ، وَاسْتَشْهَدَ بِهِ الْبُخَارِيُّ، وَوَثَّقَهُ ابْنُ مَعِينٍ، وَقَالَ أَبُو حَاتِمٍ الرَّازِيّ: لَا يُحْتَجُّ بِهِ، وَحَدِيثُهُ حَسَنٌ وَلَيْسَ بِقَوِيٍّ.
وَقَالَ يَحْيَى الْقَطَّانُ: سَأَلْت عَنْهُ بِالْمَدِينَةِ، فَلَمْ يَحْمَدُوهُ، قِيلَ: لِأَنَّهُ كَانَ قَدَرِيًّا فَنَفَوْهُ مِنْ الْمَدِينَةِ، فَأَمَّا رِوَايَاتُهُ فَلَا بَأْسَ بِهَا، وَقَالَ الْبُخَارِيُّ فِيهِ: مُقَارِبُ الْحَدِيثِ".(فتح القدير لابن الهمام)

"حديث "صلوها وإن طردتكم الخيل" يعني سنة الفجر، أبو داود من حديث أبي هريرة بلفظ: «لا تدعوهما وإن طردتكم الخيل»، وفي الباب عن عائشة: «ما رأيت النبي صلى الله عليه وسلم في شيء من النوافل أسرع منه إلى الركعتين»، وفي لفظ: «أشد معاهدةً منه على الركعتين قبل الفجر»، أخرجاه، ولمسلم عنها مرفوعاً: «ركعتا الفجر خير من الدنيا وما فيها»، وللبخاري عنها: «أن النبي صلى الله عليه وسلم كان لايدع أربعاً قبل الظهر وركعتين قبل الفجر»، وله عنها: «لم يكن يدعهما أبداً»، وللطبراني في الأوسط عنها: «لم أره ترك الركعتين قبل صلاة الفجر لا في سفر ولا حضر ولا صحة ولا سقم»، ولأبي يعلى عن ابن عمر: «لا تتركوا ركعتي الفجر؛ فإن فيهما الرغائب»، حديث الوعيد بترك الجماعة تقدم شيء منه في أبواب الإمامة". (الكتاب : الدِّرَايَةُ فِيْ تَخْرِيْجِ أَحَأدِيْثِ الْهِدَايَةِالمؤلف : الحافظ ابن حجر العسقلاني)فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909202117

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے