بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 22 نومبر 2019 ء

دارالافتاء

 

قسطوں پر گاڑی لینے کا حکم اور جواز کی شرائط، میزان بینک سے قسطوں پر گاڑی لینے کا حکم


سوال

قسطوں پر گاڑی لینا کیسا ہے؟ اور اس کی شرط اور میزان بینک سے لینا کیساہے؟

جواب

قسطوں پر گاڑی لینا جائز ہے بشرطیکہ عقد کے وقت اُدھار کی مدت اور کوئی ایک قیمت متعین کرلی جائے  اور قسط میں تاخیر ہونے کی صورت میں کوئی اضافہ/ جرمانہ وصول نہ کیاجائے۔ مذکورہ شرائط نہ پائی جائیں تو یہ بیع ناجائز ہوگی۔

میزان بینک سے قسطوں میں گاڑی لینے والے معاملہ میں متعدد شرعی اصولوں کی خلاف ورزی لازم آتی ہے؛ اس لیے میزان بینک سمیت کسی بھی بینک سے قسطوں پر گاڑی لینا جائز نہیں ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010200054

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے