بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ربیع الثانی 1442ھ- 02 دسمبر 2020 ء

دارالافتاء

 

 عشر نکالنے میں دسواں یا بیسواں حصے کی علت


سوال

 عشر نکالنے میں دسواں یا بیسواں حصے کی علت صرف سیرابی ہی ہے یا اور کچھ بھی ہے ?

جواب

عشری زمین میں عشر (دسواں) اور نصف عشر(بیسواں) واجب ہونے کا فرق زمین کے بارش کے پانی اور کنواں وغیرہ کے پانی سے سیراب کرنے کے فرق کی بنا پر ہے، یعنی زمین سیراب کرنے میں اگر محنت و مشقت اٹھانی پڑتی ہو یا پانی خریدنا پڑتا ہو تو ایسی صورت میں پورے عشر کی بجائے نصفِ  عشر لازم ہوتا ہے۔

حاشية رد المحتار على الدر المختار - (2 / 328):
" لأن العلة في العدول عن العشر إن نصفه في مستقى غرب ودالية هي زيادة الكلفة كما علمت". 
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010201144

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں