بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

19 ذو الحجة 1441ھ- 10 اگست 2020 ء

دارالافتاء

 

سودی بینک میں اکاؤنٹ کھلوانا


سوال

میرے بھائی کا کہنا ہے کہ سودی بنک میں اکاؤنٹ کھولو،  حکومت میزان بنک کو نہیں مانتی؛ کیوں کہ  ہم نے بلیک منی کو وائٹ کرنا ہے، کیوں کہ ہم نے گاڑی خریدنی ہے، لیکن ہم بنک کے ذریعے نہیں لے رہے ہیں ،سودی بںک میں اکاؤنٹ کھولنا پڑے گا؟

جواب

کسی بھی بینک میں سودی اکاؤنٹ (مثلا سیونگ اکاؤنٹ وغیرہ) کھلوانا جائز نہیں ہے، بوقتِ ضرورت کرنٹ اکاؤنٹ کھلوانے کی گنجائش ہے۔ پیسہ اگر خلافِ شریعت نہیں ہے تو وائٹ کرنے کے لیے کو ئی جائزتدبیر اختیارکی جاسکتی ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200729

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں