بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

14 ربیع الثانی 1442ھ- 30 نومبر 2020 ء

دارالافتاء

 

سحری کا وقت ختم ہوجانے کے بعد بھی منہ میں نسوار رہنے دی تو روزہ کا حکم


سوال

سحری کے وقت اگر کسی نے منہ میں نسوار رکھ دی اور سحری کا وقت ختم ہو گیا اور اس کے بعد بھی 5 یا 10 منٹ تک منہ میں نسوار کو رہنے دیا تو کیا اس سے اس کا روزہ ٹوٹے گا یا نہیں؟ اور اس پر قضا اور کفارہ دونوں لازم ہو گا یا نہیں ؟

جواب

اگر سحری کا وقت ختم ہوجانے کے بعد منہ میں جو نسوار تھی اس کا ذائقہ حلق میں محسوس ہوا ہو یا اس کے ذرات حلق میں اترے ہوں  تو  اس شخص کا اس دن کا روزہ نہیں ہوگا، قضا لازم ہوگی، کفارہ لازم نہیں ہوگا۔

فتاوی شامی(2/ 415):
"(إلا إذا مضغ بحيث تلاشت في فمه) إلا أن يجد الطعم في حلقه، كما مر واستحسنه الكمال قائلاً: وهو الأصل في كل قليل مضغه".  فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144104200408

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں