بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 شوال 1441ھ- 28 مئی 2020 ء

دارالافتاء

 

ذیابیطس کے مریض کا عذر کی وجہ سے روزہ توڑدینا


سوال

میری بیوی جس کی عمر 66 سال ہے،  اور ذیابیطس کی مریضہ ہے، اس نے رمضان کے فرض روزے کے لیے سحری کھائی، انسولین کا ٹیکہ لگایا، جیسے ہی فجر  کی اذان مساجد اور ٹی وی پر شروع ہوئی، اسے دو تین بھرپور قے آئیں.چوں کہ اس کا سارا کھایا پیا نکل گیا تھا؛ اس لیے میں نے اسے روزہ نہ رکھنے کا کہا.مجھے ڈر تھا کہ خالی پیٹ انسولین نقصان دے گی. اس نے روزہ نہیں رکھا،  بقول میری بیوی اس نے ٹی وی پر نصف نیت زبانی بھی پڑھی تھی جب کہ دل میں روزہ کی نیت تھی.  مذکورہ صورت میں آپ فرمائیں کہ کیا اس روزہ کی قضا کے ساتھ کفارہ واجب ہوگا یا نہیں؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں ذکر کردہ تفصیل کی رو سے آپ کی بیوی پر صرف اس روزہ کی قضا لازم ہوگی، کفارہ لازم نہیں ہوگا۔

البحر الرائق شرح كنز الدقائق ومنحة الخالق وتكملة الطوري (2/ 303):
"(قوله: لمن خاف زيادة المرض الفطر)؛ لقوله تعالى: {فمن كان منكم مريضاً أو على سفر فعدة من أيام أخر} [البقرة: 184] فإنه أباح الفطر لكل مريض لكن القطع بأن شرعية الفطر فيه إنما هو لدفع الحرج وتحقق الحرج منوط بزيادة المرض أو إبطاء البرء أو إفساد عضو، ثم معرفة ذلك باجتهاد المريض والاجتهاد غير مجرد الوهم، بل هو غلبة الظن عن أمارة أو تجربة أو بإخبار طبيب مسلم غير ظاهر الفسق، وقيل: عدالته شرط". 
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010200052

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاش

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے نیچے کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے۔

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے