بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 شعبان 1441ھ- 06 اپریل 2020 ء

دارالافتاء

 

حاملہ عورت کا بچے کو دودھ پلانا


سوال

ایک عورت کا ایک سال کا ایک بچہ ہے اور وہ عورت حاملہ بھی ہے,تو اس عورت کو اس ایک سال کے بچے کو دودھ پلانا جائز ہے? ان کو کسی نے بتایا ہے کہ یہ نا جائز ہے.

جواب

شرعی اعتبار سے حاملہ عورت کے لیے بچے کو دودھ پلانے کی ممانعت نہیں ہے، اس لیے حاملہ عورت بچے کو دودھ پلاسکتی ہے، البتہ اگر ماہر دِین دار طبیب /ڈاکٹر حاملہ ہونے کی وجہ سے دودھ  کے خراب ہونے اور دودھ  پینے والے بچے کی صحت پر اثر پڑنےکے  اندیشے کی وجہ سے اس حال میں دودھ پلانے سے منع کرے تو اس کی رائے پر عمل کرنا درست ہوگا اور اس صورت میں دودھ نہ پلانے میں کوئی حرج نہیں،  حاصل یہ ہے کہ حالتِ حمل میں بچے کو دودھ پلانا ناجائز نہیں،  البتہ طبی اعتبار سے کسی نقصان کا اندیشہ ہوتو دودھ پلانے سے احتراز کرنا درست ہوگا۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144107200943

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے