بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

6 شعبان 1441ھ- 31 مارچ 2020 ء

دارالافتاء

 

جمعہ میں دو خطبے پڑھنا رسول اللہ ﷺ سے ثابت ہے


سوال

جمعہ میں دو خطبے پڑھنا کیا آں حضرت ﷺ سے یا صحابہ سے ثابت ہے؟

جواب

جمعہ میں دو خطبے پڑھنا اور دونوں کے درمیان وقفہ کرکے بیٹھنا مسنون ہے، رسول اللہﷺ کا یہی معمول تھا ۔

مسلم شریف میں ہے:

"عن جابر بن سمرة رضي الله عنه قال: كانت للنبي صلى الله عليه وسلم خطبتان يجلس بينهما، يقرء القرآن ويذكر الناس، فكانت صلوته قصداً وخطبته قصداً". (رواه مسلم 9/3 ط بیروت)

ترجمہ: حضرت جابر بن سمرہ رضی اللہ عنہ سے روایت ہے کہ نبی کریم ﷺ کے دو خطبے ہوتے تھے جن کے درمیان آپ ﷺ بیٹھتے تھے، ان میں قرآنِ مجید پڑھتے تھے اور لوگوں کو نصیحت فرماتے تھے، الغرض رسول اللہ ﷺ کی نماز بھی معتدل ہوتی تھی اور خطبہ بھی معتدل۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144103200485

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے