بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

22 جُمادى الأولى 1441ھ- 18 جنوری 2020 ء

دارالافتاء

 

بینک کے کاروبار کا حکم


سوال

بینک کاروبار کیسا ہے؟

 

جواب

بینک  کے  نظام کی بنیاد سود پر ہے، اور درحقیقت یہ قرضوں کی لین دین کا ادارہ ہے، جس کی عملی صورت بینک میں سودی ہوتی ہے، اور سود کا لینا دینا قرآن وحدیث کی واضح نصوص کی رو سے قطعاً حرام ہے،  اس پر سخت وعیدیں وارد ہوئی ہیں، لہذا بینک سے کسی بھی قسم کے تمویلی معاملات جائز نہیں ہیں۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144103200394

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے