بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

7 ربیع الثانی 1441ھ- 05 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

اہلِ تشیع اور عیسائیوں کے ساتھ کھانا کھانے کا حکم


سوال

 عیسائیوں اوراہلِ تشیع  کے ساتھ  کھانا کھاناجائز ہےیا نہیں؟

جواب

عام احوال میں  اہلِ تشیع کے ساتھ کھاناکھانا  جائز ہے، البتہ جن شیعہ کے عقائد خراب ہوں ان کی مذہبی تقریبات میں شریک ہوکر ان کے ساتھ کھانا کھانااوردوستانہ رکھنا یا ان کے ساتھ کھانا پینا رکھنے میں اپنے عقائد بگڑنے کا اندیشہ ہو  تو  ان کے ساتھ کھانا پینا جائز نہیں ہوگا۔

نیز عیسائیوں کے ساتھ بھی عام احوال میں کھانا کھانا جائز ہے، تاہم بے ضرورت اختلاط سے پرہیز کرنا بہتر ہے۔ اور دلی تعلق و دوستی اور ان کی مذہبی تقریبات میں شرکت جائز نہیں ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144003200368

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے