بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 ربیع الثانی 1441ھ- 11 دسمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

استعمال کے موبائل اور گاڑی پر زکاۃ کا حکم


سوال

اپنے استعمال میں ہونے والے موبائل اور استعمال میں آنے والی گاڑی کی بھی زکاۃ  نکالنی ہوگی؟

جواب

ذاتی استعمال کے موبائل اورگھریلو استعمال کی سواری (کار، موٹر سائیکل وغیرہ) میں زکاۃ واجب نہیں ہے۔البتہ اگر گاڑی ،موبائل وغیرہ تجارت کی نیت سے رکھے ہوں تو اموالِ زکاۃ  میں شمار ہوں گے۔ اور موبائل کی مالیت نصابِ زکاۃ کے برابر یا اس سے زیادہ ہو تو سالانہ اس پر زکاۃ فرض ہوگی۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144007200617

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔ سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے