بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 22 نومبر 2019 ء

بینات

 
 

مکاتیب علامہ محمد زاہد کوثری رحمۃ اللہ علیہ ... بنام... مولانا سیدمحمد یوسف بنوری رحمۃ اللہ علیہ (پندرہویں قسط)

مکاتیب علامہ محمد زاہد کوثری  رحمۃ اللہ علیہ 

 ۔۔۔ بنام ۔۔۔ مولانا سید محمد یوسف بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

            (پندرہویں قسط)


{  مکتوب :…۲۵  }

 

جناب صاحبِ فضیلت، علامہ یگانہ، ومحققِ یکتا، مولانا سید محمد یوسف بنوری حفظہ اللّٰہ ورعاہ، ووفقہٗ وإیانا لکل ما فیہ رضاہ فی خیر وعافیۃ (اللہ آپ کی حفاظت فرمائے، اور آپ کو اور ہمیں خیر وعافیت کے ساتھ اپنی رضا والے اعمال کی توفیق بخشے)
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

بعد سلام! ربیع الثانی ۱۳۶۸ھ کو آپ کا والانامہ موصول ہوا، آپ کی صحت وعافیت سے بہت مسرت ہوئی، اس عاجز کی صحت کے بارے مسلسل اہتمام پر آپ کا بے حد شکر گزار ہوں۔ اللہ تعالیٰ آپ کو قوت وطاقت بخشے، اور آپ کو مزید صحت عنایت فرمائے، تاکہ آپ علمی خدمات پیش کرسکیں، جن کا اس غبار آلودہ دور میں آپ سے انتظار ہے۔ آپ نے تکلیف اُٹھا کر دائرہ (دائرۃ المعارف النعمانیۃ) کی تمام مطبوعات کے نام ذکر کیے، اس افادے پر بھی آپ کا شکریہ۔ جزء ثانی بمع دونوں قسم مطبوع ہے۔ ’’تاریخ البخاری‘‘ کا جزء ثالث (دونوں قسم) نہیں چھپا، میرے پاس جزء اول وجزء رابع (دونوں قسم) ہیں، ثانی ہی میرے پاس نہیں ہے۔ 
مولانا میاں کو ’’إحیاء المعارف النعمانیۃ‘‘ کے متعلق دوسری بار لکھا تھا، لیکن جواب نہیں مل پایا، شاید وہ مصروف ہیں، انہوں نے آنجناب کو ’’نصب الرایۃ‘‘ کے چار نسخوں کا لکھا ہے، اس پر بہت شکرگزار ہوں، توقع ہے کہ آپ انہیں خط ارسال کرتے وقت میرا شکریہ پہنچائیں گے۔ میں یہ نسخے ہدیتاً نہیں، قیمتاً لینا چاہ رہا تھا، لیکن انہوں نے اپنی فطری فیاضی کی بنا پر مزید مہربانی فرمادی، اللہ انہیں دارین کی سعادتیں عطا فرمائے، اور انہیں اور ہمیں صحت وعافیت اور خوش بختی کے ساتھ ہر خیر کی توفیق عطا فرمائے۔
شاید ’’حسن التقاضی فی سیرۃ الإمام أبی یوسف القاضی‘‘ آپ تک پہنچ گئی ہوگی، میرے عظیم تر بھائی! اس عاجز کے لیے آپ کا شوق ومحبت میرے (دل میں آپ کے لیے موجزن) جذبات کا ہی کچھ حصہ ہے، مجلسِ علمی کے لیے بطورِ ہدیہ ’’النکت‘‘ کے پچاس نسخے برآمد کنندہ کے سپرد کرچکا ہوں کہ بذریعہ ڈاک آپ کو بھیج دے، تاکہ ان میں مجلس جیسے چاہے تصرف کرے، احباب کو ہدیہ کرے یا فروخت کرے، میں نے اُس عظیم تحفے کے بدلے یہ معمولی ہدیہ پیش کیا ہے۔ 
اُمید ہے مولانا مفتی (مہدی حسن شاہ جہان پوری)، مولانا ابوالوفاء اور دیگر تمام احباب بخیر وعافیت ہوں گے، جب آپ اپنے جلیل القدر والد محترم کو خط لکھیں تو مہربانی فرما کر ان کی دست بوسی کے ساتھ میرا مخلصانہ سلام پہنچا دیجیے گا، ان کی بابرکت دعاؤں کا امید وار ہوں۔
علامہ احمد بن حسن بیاضیؒ (متوفی: ۱۰۹۸ھ) (۱) کی ’’إشارات المرام من عبارات الإمام‘‘ کی ایک جلد میں ’’مطبعۃ مصطفی البابی‘‘ سے طباعت جاری ہے۔ ماتریدیہ کے عقائد میں یہ اہم کتاب ہے(۲)، اس کا متن ’’الأصول المنیفۃ للإمام أبی حنیفۃؒ‘‘، الہٰیات میں محتاط متن ہے (جو امام صاحبؒ کی ’’العالم والمتعلم‘‘ ، ’’الفقہ الأکبر‘‘، ’’الفقہ الأبسط‘‘، ’’رسالۃ الإمام إلی عثمان البتی فی الإرجاء‘‘ اور ’’الوصیۃ‘‘ (۳) کی عبارات پر مشتمل ہے)، متن وشرح دونوں اس علمِ کلام کے ماہر جلیل القدر عالم کے ہیں، شاید یہ کتاب ایک ماہ بعد چھپ جائے گی۔ ان دنوں بحری ڈاک کی جو حالت ہے اس کی بنا پر شاید ’’النکت‘‘ کے پہنچنے میں تاخیر ہوگی۔ اُمید ہے کہ اپنی نیک دعاؤں میں مجھے نہ بھولیں گے میرے عزیز تر محترم بھائی!
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        مخلص 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                              محمد زاہد کوثری
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                  ۲۹؍ ربیع الثانی ۱۳۶۸ھ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                           شارع عباسیہ نمبر: ۶۳،قاہرہ

پس نوشت: 

توقع ہے کہ عزیز بھائی مولانا احمد رضا بجنوری کو خط ارسال کرتے وقت میرا سلام پہنچائیں گے۔ امید ہے مولانا (ظفر احمد) تھانوی بھی بخیریت ہوں گے۔ 
بلاشبہ ’’معجم المصنفین‘‘ (۴)کی خاص اہمیت ہے، شاید انہوں نے مولانا (آدم) بنوریؒ کے حالات کے بیان میں توسع سے کام لیا ہے۔(۵)
صاحبِ ’’التحفۃ المرسلۃ‘‘ (۶)محمد بن فضل اللہ برہان پوری (متوفی :۱۰۲۹ھ) (۷) کے حالاتِ زندگی کہاں ملیں گے؟

حواشی

۱:-احمد بن حسن بیاضی حنفیؒ: فقیہ ومتکلم، عثمانی حکومت میں صاحبِ مرتبہ تھے، کئی اسلامی شہروں کے قاضی رہے، ۱۰۴۴ھ میں بوسنیا میں ولادت ہوئی اور ۱۰۹۸ھ میں استنبول کے قریب ایک گاؤں میں انتقال ہوا۔
دیکھیے: ’’خلاصۃ الأثر فی أعیان القرن الحادی عشر‘‘ محمد امین بن فضل اللہ محبی ؒ:،ج ۱،ص: ۱۸۱-۱۸۲ اور ’’الأعلام‘‘ زرکلیؒ ،ج:۱،ص:۱۱۲ ۔
۲:-علامہ محبیؒ اس کتاب پر تبصرہ کرتے ہوئے رقم طراز ہیں:’’اس میں بہت سے مباحث کا استیعاب کیا ہے، اور بہت عمدہ کام کیا ہے۔ (خلاصۃ الأثر ،ج: ۱،ص: ۱۸۱) علامہ کوثریؒ نے بھی ذکر کیا ہے کہ مسئلہ جبر واختیار کی تحقیق کے متعلق یہ کتاب اور ’’اللمعۃ‘‘ اور ’’النظامیۃ‘‘ سب سے بہتر تالیفات ہیں۔ ملاحظہ کیجیے: ’’الاستبصار‘‘ (ص: ۴)
۳:-دیکھئے:’’إشارات المرام‘‘ بیاضی (ص:۲۱-۲۲)۔ علامہ کوثریؒ نے کتاب ’’العالم والمتعلم‘‘ بروایتِ ابو مقاتل عن أبی حنیفۃؒ، مسئلہ ارجاء کے متعلق ’’رسالۃ أبی حنیفۃؒ إلی البتی إمام أہل البصرۃ‘‘ اور امام صاحبؒ کی ’’الفقہ الأبسط‘‘ بروایتِ ابومطیع شائع کی ہیں۔ دیکھیے: آگے مکتوب نمبر :۲۷۔
۴:- یہ مولانا محمود حسن خان ٹونکیؒ کی تالیف ہے، جو تراجم (رجال کے احوالِ زندگی) کے بڑے عالم تھے، ۱۳۶۶ھ میں انتقال ہوا، مولانا ابوالحسن علی ندوی  رحمۃ اللہ علیہ  کے مطابق ان کی یہ کتاب ’’معجم المصنفین‘‘ ساٹھ جلدوں اور لگ بھگ چالیس ہزار تراجم پر مشتمل ہے، لیکن محض چار ہی جلدیں طبع ہوئی ہیں۔
ملاحظہ کیجیے: ’’الأعلام‘‘ زرکلیؒ (ج:۷،ص: ۱۶۷)، ’’نزہۃ الخواطر‘‘ (ج:۸،ص:۱۳۷۷)، ’’الإعلام‘‘ محمد آل رشید (ص: ۱۵۲)، اور ’’حیاۃ العلامۃ المحدث حیدر حسن خان الطونکی‘‘ محمد عامر صدیقی ٹونکی (ص: ۶۷-۷۲)
۵:-مولانا محمود حسن ٹونکی ؒنے اپنی کتاب ’’معجم المصنفین‘‘ میں ہمارے جدِ امجد شیخ آدم بنوری  رحمۃ اللہ علیہ  کے مفصل حالاتِ زندگی لکھے ہیں، دیکھیے: کتابِ مذکور (ج:۳،ص:۱۰-۱۴)۔
۶:-’’التحفۃ المرسلۃ إلی النبیؐ‘‘ مراد ہے، اس حوالے سے علامہ محبیؒ لکھتے ہیں: ’’موصوف اس کتاب سے سنہ ۹۹۹ھ میں فارغ ہوئے، اور پھر اس کی لطیف شرح لکھی، جس میں انوکھے مباحث لائے، اور محقق صوفیاء جن موہم و نادرست شطحیات میں پڑتے ہیں ان کا ایسا اعتذرا کیا ہے جو اللہ تعالیٰ کے ہاں قرب اور اچھا ٹھکانہ کی نیت رکھنے والے شخص کے ہاں قابلِ قبول ہوگا، اس کی شرح لکھنے والوں میں سربرآوردہ محقق ابراہیم بن حسن کورانی مہاجر مدنیؒ بھی ہیں۔ دیکھیے : ’’خلاصۃ الأثر‘‘ (ج:۱،ص:۱۱۰)
محقق کورانیؒ کی اس شرح کا نام’’إتحاف الذکي بشرح التحفۃ المرسلۃ إلی النبيؐ‘‘ ہے۔ ملاحظہ کیجیے: ’’ہدیۃ العارفین‘‘ اسماعیل پاشا (ج:۱،ص:۳۵) اور اس کے کئی نسخے دنیا بھر کے کتب خانوں میں پھیلے ہوئے ہیں۔
۷:- محمد بن فضل اللہ برہان پوری: کبار صوفیاء میں سے ہیں، ان کی طرف وحدت الوجود کا قول منسوب ہے، برہان پور انڈیا میں سنہ ۱۰۲۸ھ میں وفات پائی۔                                                 (جاری ہے)

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے