بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

15 ربیع الثانی 1442ھ- 01 دسمبر 2020 ء

بینات

 
 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 


حضرت مولانا عبدالرحمن کامل پوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

بخدمت گرامی مخدومی، محترم المقام، جناب حضرت مولانا یوسف صاحب زید مجدکم

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

ایک عریضہ تقریباً ایک ہفتہ سے ارسالِ خدمت کیا، اُمید ہے کہ شرف یاب ہوا ہوگا۔ تقریباً ایک ماہ سے میں بوجہ مختلف امراض کے صاحبِ فراش ہوں، اب تین چار روز سے بفضلہ تعالیٰ اچھا ہوں۔ اکوڑہ والوں کا بے حد اصرار ہے ، اب شاید وہاں جانا ہو، یابعد از عید۔ دعا فرماویں کہ حق تعالیٰ بہتر فرمائے۔ آنجناب سے استدعا ہے کہ احقر کے لیے خصوصی دعائیں فرماتے رہا کریں اور اپنی خیریت سے اور جملہ حالات سے ہمیشہ مطلع فرمایا کریں۔ یہ خیال نہ فرماویں کہ میں آنجناب سے دور ہوگیا‘ سو دور ہوگیا، میرا قلب ہر وقت آپ کے ساتھ معلق ہے اور آپ کی جدائی سے پریشان ہے ۔
عزیز عبدالحمید سلمہٗ حاضرِ خدمت ہوتے ہیں، حاجی حجن صاحب وحاجی صاحب کے اصرار پر آرہے ہیں، ان کو آنجناب مناسب کلمات فرماویں کہ اُن کو وہاں جاکر تکلیف نہ ہو۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                 فقط والسلام
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                   عبدالرحمن از بہبودی
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                        پنجشنبہ ۲۶شوال ۷۲ھ

حضرت مولانا عبدالرحمن کامل پوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

بخدمت گرامی مخدومی، محترم المقام، جناب حضرت مولانا محمد یوسف صاحب زادت محاسنکم

السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

میں ایک ماہ سے زائد صاحبِ فراش رہا، اب ایک عشرہ سے تقریباً اچھا ہوں۔ میرا ارادہ وطن سے باہر کہیں بھی جانے کا ہرگز نہ تھا، مگر بادشاہ گل صاحب کے بے حد اصرار سے میں گویا مضطر ہوگیا تھا اور خیال تھا کہ بعد از عیدیہاں آؤں، مگر اُن کے تقاضوں کی وجہ سے پہلے ہی آگیا، چنانچہ جمعہ ۲۴ذیقعدہ کو یہاں آکر کام شروع کردیا ہے۔ چونکہ یہ سب خلافِ طبع ہی ہے، دوسرے آنجناب کی جدائی کا صدمہ بھی دن بدن ترقی پر ہے، اس لیے اب تک جی نہیں لگا۔ دعا فرمائیں کہ اللہ تعالیٰ دنیا وآخرت میں میرے لیے جو بہتر ہے، وہ پیش کردے۔ اللہ تعالیٰ آپ کی عزت اوروقار کو قائم رکھے اور ان لوگوں کے شر سے محفوظ رکھے۔ میں ہمیشہ کے لیے خادم اور دعاگوں ہوں اور آنجناب سے بھی دعا کی درخواست کرتا ہوں۔ اس سے قبل ایک عریضہ بہبودی سے ڈاک میں اور ایک دستی عزیز عبدالحمید کے ہاتھ ارسال کیا ہے، اُمید ہے کہ دونوں خدمتِ سامی میں پہنچ گئے ہوں گے۔ اپنی خیریت سے اور حالات سے کبھی کبھی مطلع فرمایاکریں کہ اطمینان ہوا کرے۔ اس خط کا جواب بہبودی کے پتہ پر ارسال فرماویں کہ میں چار پانچ روز میں عید گزارنے کے لیے بہبودی جاؤں گا۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                          فقط والسلام 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                           خادم عبدالرحمن غفرلہٗ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                          جامعہ اسلامیہ اکوڑہ خٹک

حضرت مولانا عبدالرحمن کامل پوری رحمۃ اللہ علیہ بنام حضرت بنوری رحمۃ اللہ علیہ 

بخدمت گرامی مکرمی، محترم المقام، حضرت مولانا محمد یوسف صاحب زادکم اللّٰہ شرفاً وکرامۃً علماً عملاً
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہ

کئی روز سے ایک عریضہ بجواب مکرمت نامہ ارسالِ خدمت کیا ہے، تاہنوز جواب سے محرومی ہے، خدا کرے مزاج بعافیت ہوں۔ اُمید ہے کہ خیریتِ مزاج مبارک و اہل و عیال مطلع فرماکر مطمئن فرماویں گے۔ ۔۔۔۔۔۔۔ کراچی کے سفر میں کیا طے ہوا؟ اس سے پہلے عریضہ میں عرض کیا تھا کہ آپ کے فیوض اور علمی وعملی برکات کا مقتضا یہ ہے کہ آپ اپنا منبعِ فیض‘ کراچی اور اس کا ماحول نہ بنائیں، بلکہ ایسی جگہ ہونا چاہیے جہاں آپ کے فیوض سے ہر ایک صوبہ بآسانی متمتع ہوسکے، اس عرض پر آنجناب نے کچھ غورفرمایاہے یا نہیں؟ الحمدللہ بندہ اور خادم زادگان سب بعافیت ہیں۔ اللہ تعالیٰ آں جناب کو تادیر بایں فیوض وبرکات بعافیت رکھے۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                          خادم ناکارہ: عبدالرحمن 
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                  از جامعہ قاسمیہ اکوڑہ 
بہ سہولت خطوط پہنچنے کے لیے اگر مکان کا نمبر یا کوئی پتہ تحریر فرمایاجائے تو بہتر ہوگا، مدرسہ کے پتہ پر تو میں قصداً خط ارسال نہیں کرتا۔

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے