بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

16 ذو الحجة 1441ھ- 07 اگست 2020 ء

بینات

 
 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمہ اللہ 

سلسلۂ مکاتیب حضرت بنوری رحمہ اللہ 

 

حضرت مولاناعبدالرحمن کامل پوری رحمہ اللہ بنام حضرت بنوری رحمہ اللہ 

بخدمتِ گرامی محترمی حضرت مولانا یوسف صاحب زاد مجدکم السامي
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہٗ

الحمدللہ! میں بعافیت ہوں، خداکرے مزاج سامی بعافیت ہوں گے۔ گرامی نامہ نے مشرف فرمایا۔ جناب والا کا ارشاد صحیح ہے کہ خداکے لیے اگر ذلت یہی ہے تو حرج نہیں۔ مدرسہ کے مفاد کے لیے اگر ذلت بھی برداشت کرنا پڑی تو بھی (بندہ) ان شاء اللہ تعالیٰ آں جناب کاتابع رہے گا۔ دوخط کراچی دربارۂ تقرر مولانا عبدالقدیر صاحب وطباعتِ سند وروئیدادِ جلسہ سالانہ وکوششِ سرمایہ لکھ چکا ہوں، مگر مجھ جیسوں کے جواب کا تو وہاں مَد ہی کوئی نہیں، اس کی توقع ہی فضول ہے، اب تویہی صورت ہے کہ جو بات بارگاہِ عالی میں عرض کرنا ہو، اس کے لیے درِ دولت پر حاضر ہو، بغیر اس کے چارہ نہیں ، رمضان اور شوال کے مشاہروں کی فکر ہے۔ اللہ آسان کردے۔
درجہ ابتدائی کے لیے تجربہ کار حلیم الطبع عالم کی ضرورت ہے۔ مولوی دُر محمد صاحب حلیم الطبع ذو استعداد تو ہیں، مگر تجربہ اتنا نہیں ،تاہم بہت اچھے ہیں، تھوڑے دنوں میں تجربہ بھی ان کو ہوجاوے گا۔ آدمی دین دار مطیع ہیں، بہتوں سے اچھے ہیں، متکبر بھی نہیں، مقرر بھی ہیں، مگر اُن کے اِس درجہ میں تقرر کے بعد مولانا قمر صاحب ، مولانا عبدالحبیب صاحب سے کیاکام لیا جاوے گا؟! یہ ایک مشکل مسئلہ ہے۔ مولوی عبدالحبیب صاحب پر تو مجھے اعتماد ہے کہ بغیر تحصیلِ چندہ کے مدرسہ میں جو کام ان سے آپ لینا چاہیں گے وہ (فیما أظن) انکار نہیں کریں گے۔ مولانا قمر صاحب کے متعلق میں کچھ نہیں کہہ سکتا۔ فارسی، اُردو حساب کی تعلیم کے لیے ایک مدرس کی سخت ضرورت ہے، اس کا انتظام بھی ضروری ہے۔ بندہ جلد حاضری کی کوشش کرے گا،کامیابی کی دعا بھی فرمائیں۔
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                 بندہ عبدالرحمن غفرلہٗ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                            از بہبودی ملک خالد، کیمل پور، رمضان المبارک ۷۱ ھ 

حضرت مولاناعبدالرحمن کامل پوری رحمہ اللہ بنام حضرت بنوری رحمہ اللہ 

بخدمتِ گرامی مکرمی محترم حضرت مولانا یوسف صاحب  زاد مجدکم
السلام علیکم ورحمۃ اللہ وبرکاتہٗ

الحمدللہ! میں ہر طرح سے بعافیت ہوں ، خداکرے مزاجِ سامی بھی بعافیت ہوں۔ دو تین روز ہوئے ایک عریضہ ارسالِ خدمت کیاہے، اُمید ہے کہ شرف یاب ہوا ہوگا۔ اخیر عشرہ رمضان المبارک کا یہاں شدید گرمی میں گزرا ہے، اب کچھ بارش ہوئی ہے ، گرمی کم ہے۔ یہاں عید منگل کو ہوئی ہے، دوشنبہ کو اَبر تھا، عام طور سے چاند نظر نہیں آیا،باہر کی شہادتوں سے عید ہوئی۔ احقر ان شاء اللہ تعالیٰ ۲۰ شوال سے پہلے حاضر ہوگا، اطمینان فرمائیں ۔
میراخیال ہے کہ جتنی قیام گاہیں سرِدست تیار اور مکمل ہیں، ان ہی کے تناسب سے داخلہ ہو، زیادہ نہ ہو کہ طلبہ اور منتظمین دونوں کو اس میں تکلیف ہوتی ہے۔ گوبعض حضرات زیادہ طلبہ داخل کرنے کے خواہاں ہوتے ہیں، مگر انہیں ہماری مشکلات کا احساس نہیں ہوتا۔
امتحانِ داخلہ میں زبان (اُردو) اور تحریر کا ضرور خیال رکھا جائے کہ بجز اس کے امتحانات اور تفہیم وتفہُّم میں دِقت ہوتی ہے۔ مدرسہ ’’مظاہرِ علوم سہارن پور‘‘ کی ایک مختصر سی روئیداد میں نے جناب کو دی تھی، اس میں ماہوار خواندگی کے نقشے بھی ہیں، اس کو ملاحظہ فرماویں۔ میرا خیال ہے کہ حضرات مدرسین کے مشورے سے ماہوار خواندگی کی ہر کتاب کے متعلق کوئی مقدار متعین ہوجائے، تاکہ کتب کے ختم کرانے اور یا کتب کے پڑھانے میں دِقت نہ ہو۔ داخلۂ امتحان میں مسامحت مناسب نہیں کہ اس کا نتیجہ بہتر نہیں ہوتا، اچھی طرح جانچ پڑتال ہونا چاہیے۔ اخلاق اور ظاہری صورت کا بھی خیال ضروری ہے کہ صورت خلافِ شرع نہ ہو، فتَّان اور شرارت پسند نہ ہو، کسی خاص جماعت سے غُلوّ نہ رکھتا ہو۔
مولوی معزالدین صاحب کا ایک خط ارسال ہے، دارالعلوم میں ان کے مناسب کچھ کام ہوتو مہتمم صاحب کو اطلاع دے کر ان کو رکھ لیاجائے، ورنہ جواب دیا جائے۔ مجھے اور مولانا عبدالحبیب صاحب کے لیے ایک مکان کی ضرورت ہے ۲۵،۳۰ کے کرایہ کا، جس میں صحن اور کم ازکم دو کمرے علاوہ دیگر ضروریات کے موجو دہوں۔ جناب والا خیال رکھیں، اگر مل جائیںتو بہتر ہے۔ آپ حضرات کے متروکہ مکانات تو رہائش کے قابل نہیں ،ان میں تکلیف ہوگی۔ معلوم ہوتاہے کہ مولانا عبدالقدیر صاحب کے متعلق کوئی فیصلہ قطعی غیر قطعی نہیں ہے ، اس لیے داخلہ ایسے ہی طلبہ کا لازمی ہے جن کے اسباق موجودہ اساتذہ پورے کرسکیں ، اس سے زیادہ نہیں ۔
مولوی دُر محمد کا کیا ہوا؟ مولوی قمر، مولوی عبدالحبیب کا کیا ہوا؟ خداکرے خانگی معاملہ بعافیت نمٹ گیا ہو: ’’اللّٰہم إنا نسئلک العفو والعافیۃ في الدنیا والآخرۃ۔‘‘
دعاء عافیتِ دارین کا طالب ہوں، بندہ بھی دعاگو ہے۔ خادم زادگان کی جانب سے سلام مسنون اور دعا کی درخواست۔ جملہ حضرات کی خدمات میں سلام مسنون۔ قاری صاحب کا کیا ہوا؟!
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                      خادم بندہ عبدالرحمن غفرلہٗ
                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                                          از بہبودی، ملک خالد، کیمل پور، ۳شوال ۷۱ھ 

تلاشں

شکریہ

آپ کا پیغام موصول ہوگیا ہے. ہم آپ سے جلد ہی رابطہ کرلیں گے