بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 ذو الحجة 1440ھ- 19 اگست 2019 ء

دارالافتاء

 

یک طرفہ عدالتی خلع کے بعد زوجین کے ساتھ رہنے کا حکم


سوال

اگر اک لڑکی اپنے شوہر کے ساتھ نہیں رہنا چاہتی وہ عدالت کے ذریعے سے خلع لے لیتی ہے، ایک سال یا دو سال بعد گھر والے دوبارہ مجبور کر شوہر کے ساتھ بھیج دیتے ہیں  جب کہ لڑکی اس شوہر کے ساتھ نہیں  رہنا چاہتی، وہ اپنی مرضی سے کسی اور سے شادی کرنا چاہتی ہے، کیا اس لڑکی کا اس شوہر کے ساتھ رہنا جائز ہے یا ناجائز؟

جواب

اگر مذکورہ لڑکی نے شوہر کی رضامندی کے بغیر عدالت سے یک طرفہ خلع لی ہے تو اس خلع کا اعتبار نہیں ہے، دونوں کا نکاح برقرار ہے؛ اس لیے  مذکورہ لڑکی کا نئے سرے سے نکاح کیے بغیر اپنے شوہر کے ساتھ رہنا جائز ہے۔ اگر لڑکی اس شوہر کے ساتھ رہنا نہیں چاہتی تو  بزرگوں کو چاہیے کہ مصلحت کے ساتھ اسے سمجھائیں بصورتِ دیگر دونوں خاندان کے بڑوں کو چاہیے کہ  لڑکے اور لڑکی کو بٹھا کر ان کے مسائل کا کوئی مناسب حل نکالیں۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200996

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے