بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 23 جولائی 2019 ء

دارالافتاء

 

ہبہ بدون القبض میں وراثت جاری ہوگی یا نہیں؟


سوال

 ایک باپ نے اپنی زندگی میں اپنا گھر بیچ کر اپنے بچوں پر تقسیم کیا اور اپنے لیے بھی کچھ پیسے رکھے، پھر کسی ایک بیٹے کے ساتھ رہنے لگا اور یہ کہا کہ میں نے اپنا حصہ اس بیٹے کو ہبہ کیا ہے، یعنی میرے مرنے کے بعد اس میں وراثت نہ ہو، بلکہ اکیلا وہ بیٹا ہی اس مال کو لے لے تو آیا اب باپ کے مرنے کے بعد اس مال میں وراثت جاری ہو گی یا اکیلے اس بیٹے ہی کو ملے گا?

جواب

اگر باپ اپنا حصہ مذکورہ بیٹے کے قبضہ  وتصرف میں بھی دے دے تو ہبہ(گفٹ) مکمل ہوجائے گا اور باپ کی وفات کے بعد  وہ مال ترکہ شمار نہ ہوگا، لیکن اگر باپ نے صرف زبانی ہبہ کیا اور وفات تک وہ حصہ اپنے قبضہ میں رکھا تو ہبہ نامکمل ہونے کی وجہ سے باپ کی وفات کے بعد وہ ترکہ شمار ہوگا اور اسے میراث میں تقسیم کیا جائے گا۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008200618

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے