بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

کیا قرآن مجید پڑھانے والے قاری صاحب حق الخدمت لے سکتے ہیں؟


سوال

آج کل آن لائن قرآن مجید پڑھانے کا رواج عام ہوگیا ہے، جس کے ذریعہ ملکی و غیر ملکی طلبہ کو قرآنِ مجید پڑھایا جاتا ہے اور اس پر اجرت لی جاتی ہے یا ہدیہ کے طور پر کچھ نہ کچھ لیا جاتا ہے، کیا آن لائن قرآنِ مجید پڑھانے پر اجرت لینا جائز ہے؟

جواب

 قرآنِ مجید پڑھانے والے استاذ درحقیقت اپنے وقت کا معاوضہ وصول کرتے ہیں، جس کے وصول کرنے میں شرعی کوئی قباحت نہیں، لہذا صورتِ مسئولہ میں آن لائن پڑھانے والے افراد حق الخدمت وصول کرسکتے ہیں، تاہم ویڈیو لنک کے ذریعہ پڑھانا خصوصاً نا محرم خواتین کو پڑھانا جائز نہیں۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144004200766

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے