بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

5 ربیع الثانی 1440ھ- 13 دسمبر 2018 ء

دارالافتاء

 

کیا کلینک پر زکات ہے؟


سوال

کیا کلینک پر زکات ہے؟

جواب

کلینک کی عمارت پر زکات نہیں ہے،اگر کلینک میں علاج معالجہ کیاجاتاہوتواس صورت میں  مالک/ڈاکٹر کو حاصل ہونے والی آمدنی تنہایادوسرے اموال کے ساتھ مل کر نصاب کو پہنچ جائے تو اس رقم پر سالانہ زکات ہوگی۔اور اگر کلینک بناکرکرایہ پر کسی کو دی گئی ہو اس صورت میں بھی عمارت کی مالیت پر زکات نہ ہوگی، بلکہ حاصل ہونے والا کرایہ تنہایادوسرے اَموالِ زکات کے ساتھ مل کر زکات کے نصاب کو پہنچ جائے تو سال گزرنے پر زکات اداکرنالازم ہوگا۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144003200371


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں