بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 21 جولائی 2019 ء

دارالافتاء

 

کسی کے موبائل فون کا ڈیٹا بغیر اجازت کے دیکھنا


سوال

 کیاکوئی کسی کاموبائل فون اور اس کاڈیٹا اجازت کے بغیر دیکھ سکتا ہے،کیا یہ پردرہ دری کےگناہ میں نہیں آتا؟

جواب

مربی (والد، استاد، شیح یا سرپرست وغیرہ) تربیت کی غرض سے اپنے ماتحتوں کے موبائل فون چیک کریں تو اس کی گنجائش ہے، بلکہ  سرپرستوں کو وقتاً فوقتاً  بچوں اور ان سے متعلقہ چیزوں پر  نظر رکھنی چاہیے کہ کہیں وہ بے راہ روی کا شکار نہ ہوجائیں۔

البتہ عام افراد کے لیے کسی کا موبائل فون اس کی صراحتاً یا دلالۃً اجازت کے بغیر استعمال کرنا  یا اس کا ڈیٹا چیک کرنا درست نہیں ہے، اجازت کے بغیر  ڈیٹا چیک کرنا ’’تجسس‘‘ میں داخل ہے، جس سے قرآن مجید میں منع کیا گیا ہے۔ نیز یہ عمل کسی کے گھر میں بلا اجازت جھانکنے کے مثل ہے، جس کی ممانعت قرآن و احادیث میں آئی ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008200303

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے