بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 16 جولائی 2018 ء

دارالافتاء

 

نکاح میں سسر کا لڑکی کی طرف سے وکیل بننا


سوال

کیا لڑکی کا سسر نکاح میں لڑکی کی طرف سے  وکیل بن سکتا ہے یا نہیں ؟

جواب

جائز ہے،  تاہم یہ ملحوظ رہے کہ نکاح سے پہلے چوں کہ سسر محرم نہیں ہوتا ؛ اس لیے وہ  اگر لڑکی کا پہلے سے کوئی محرم نہ ہو تو لڑکی کی اجازت کے لیے بے پردہ اس کے سامنے نہ جائے، بلکہ پس پردہ یا تحریری طور پر لڑکی اس کو نکاح کا وکیل بنادے ، اگر محرم ہوتو  پھر سامنے جانے میں بھی کوئی مضائقہ نہیں.فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143909201037


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں