بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 15 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

نان کسٹم پیڈ گاڑیوں کا کاروبار کرنا


سوال

اکثر لوگ چمن بارڈر پر نان کسٹم پیڈ گاڑیاں خریدتے ہیں اور سوات، بونیر اور وہ علاقے جہاں نان کسٹم پیڈ گاڑیاں چلتی ہیں، وہاں جا کر ان کو فروخت کر دیتے ہیں، چمن بارڈر سے ان علاقوں تک پہنچنے میں پولیس کا ناکہ آجائے تو ان کو پیسے دے کر جان چھڑاتے ہیں ، اکثر لوگ یہ کاروبار کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ یہ  جائز  ہے کیوں کہ حکومت کی جانب سے عائد کردہ ٹیکس ظالمانہ ہے؛ کیوں کہ حکومت آپ سے چیز کی اصل قیمت سے زائد ٹیکس وصول کرتی ہے۔سوال یہ ہے کہ مذکورہ کاروبار کرنا شرعاً جائز ہے یا نہیں؟

جواب

صورتِ مسئولہ میں مذکورہ کاروبار فی نفسہ جائز اور اس سے حاصل شدہ آمدنی حلال ہے، تاہم رشوت دینا اور جھوٹ بولنا جائز نہیں۔ اور خطرے میں پڑنا شرعاً پسندیدہ نہیں ہے۔

 امداد الفتاوی ( جدید مطول حاشیہ شبیر احمد القاسمی) (جلد 9 صفحہ نمبر: 135) میں ہے:

’’سوال (۲۴۹۶) :  قدیم  ۴/ ۱۵۲-   زید انکم ٹیکس ادا کرنے کی حیثیت رکھتا ہے، تاہم معافی کے خیال سے اپنے مالِ تجارت کو تشخیص کنندہ ٹیکس سے چھپا کر اپنے کو ناقابل ثابت کرتا ہے، آیا یہ فعل زید کا ازروئے شرع شریف کیسا ہے؟ بینوا توجروا۔

الجواب: گناہ تو نہیں ؛ لیکن خطرہ میں پڑنا بھی شرعاً پسند نہیں ۔                                         ۱۸؍ ربیع الاول ۱۳۳۱ھ(حوادث اول ص ۱۶)‘‘. فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144003200083

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے