بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

15 شعبان 1440ھ- 21 اپریل 2019 ء

دارالافتاء

 

موبائل میں ویڈیو رکھنے کا حکم


سوال

 کیا ہم علماءِ  کرام کی ویڈیو تقاریر اپنے موبائیل میں رکھ سکتے ہیں؟

جواب

شریعتِ مطہرہ میں جان دار کی تصویر بنانامطلقاً حرام ہے خواہ وہ تصویر کی صورت میں ہو یا ویڈیو کی شکل میں، خواہ وہ علماء کی ہو یا دیگر لوگوں کی، نیز جس طرح تصویر بنانا شرعاً ممنوع ہے اسی طرح اس کو محفوظ رکھنا بھی ممنوع ہے؛ لہذااپنے موبائل میں جان دار کی تصاویر پر مشتمل ویڈیو رکھنا درست نہیں، البتہ بلاتصویر تقاریر رکھنا جائز ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144007200609

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں