بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 ذو الحجة 1440ھ- 19 اگست 2019 ء

دارالافتاء

 

مستحقِ زکات کی تحقیق


سوال

یہ کیسے معلوم ہوگا کہ فلاں شخص زکات  کا مستحق ہے؟ اس کی تحقیق میں کیا یہ کافی ہے کہ مجھے اس کی گفتگو اور باتوں سے اندازہ ہوا؟

جواب

اگر زکات دینے والے کا  غالب گمان یہ ہو کہ جسے زکات دی جارہی ہے وہ مستحق ہے اور اس کا دل مطمئن ہو تو اس کو زکات دینا جائز ہے، خواہ یہ اطمینان مستحق کی ظاہری حالت دیکھ کر ہو رہا ہو، یا اس کی باتوں سے غالب گمان ہوجائے،  یا مستحق کے خود بتانے سے یا اس کے زکات کا سوال کرنے سے غالب گمان حاصل ہوجائے، مزید تحقیق وتفتیش کی ضرورت نہیں ہے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008200948

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے