بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 22 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

مجرباتِ اکابر کی حیثیت


سوال

 مجرباتِ اکابر کی شرعی حیثیت کیا ہے؟ نیزمجربات و بدعات میں کیا فرق ہے؟

جواب

’’مجرباتِ اکابر ‘‘ کا مطلب یہ ہے کہ قرآنِ مجید اور حدیثِ مبارک سے صراحتاً غیر ثابت شدہ اعمال، وظائف یا نسخے، جو اکابر سے ثابت ہوں، خواہ وہ روحانی یا جسمانی امراض سے شفا کے حوالے سے ہوں یا دیگر جائز امور و مقاصد کے حل کے لیے ہوں، ان کی شرعی حیثیت جواز کی ہے۔  اس عمل کو اس نیت سے کرنا جائز ہے کہ یہ قرآن و حدیث سے ثابت نہیں، البتہ اس کی کوئی نہ کوئی اصل (خواہ اشارۃً ہو) قرآن وحدیث میں موجود ہوتی ہے۔  بہر حال اس کی حیثیت شریعت کے کسی مستحب عمل سے بھی کم درجے کی ہے۔مثلاً:  کسی موقع پر کوئی خاص ذکر کرنا۔ اس میں خاص موقع پر خاص ذکر تو کسی بزرگ کا تجربہ ہوگا، اور شرعی اعتبار سے اس کی حیثیت جواز کی ہوگی، اور قرآن وحدیث سے اس موقع کے لیے یہ خاص ذکر ثابت نہیں ہوگا، لیکن اس کی اصل یعنی اس میں موجود نفسِ ذکر قرآن وحدیث سے ثابت بھی ہے اور شرعاً مستحب بھی ہے۔ 

بدعت: ’’ ہر وہ کام جس کی کوئی  شرعی اصل، مثال یا نظیر  کتاب و سنت اور آثارِ صحابہ میں موجود نہ ہو (قرونِ اولیٰ ثلاثہ میں اس پر عمل کے امکان کے باوجود صحابہ وتابعین وتبع تابعین نے اسے اختیار نہ کیا ہو)  اور اس کو دین میں ثابت شدہ  اور ثواب کا کام سمجھ کر کیا جائے، یا کسی جائز و مستحب کام کو لازم سمجھ کر کیا جائے اور نہ کرنے والے کو موردِ طعن ٹھہرایا جائے وہ ’’بدعت‘‘ ہے‘‘۔

حافظ ابنِ حجر عسقلانی رحمہ اﷲ علیہ بدعت کا اِصطلاحی مفہوم ان الفاظ میں بیان کرتے ہیں :

"المحدثه والمراد بها ما أحدث، وليس له أصلٌ في الشرع ويسمي في عرف الشرع ’’بدعة‘‘، وما کان له أصل يدل عليه الشرع فليس ببدعة، فالبدعة في عرف الشرع مذمومة بخلاف اللّغة : فإن کل شيء أحدث علي غير مثال يسمي بدعة، سواء کان محمودًا أو مذمومًا".

’’محدثہ امور سے مراد ایسے نئے کام کا ایجاد کرنا ہے جس کی شریعت میں کوئی اصل موجود نہ ہو۔ اسی محدثہ کو اِصطلاحِ شرع میں ’’بدعت‘‘ کہتے ہیں۔ لہٰذا ایسے کسی کام کو بدعت نہیں کہا جائے گا جس کی اصل شریعت میں موجود ہو یا وہ اس پر دلالت کرے۔ شرعی اعتبار سے بدعت فقط بدعتِ مذمومہ کو کہتے ہیں لغوی بدعت کو نہیں۔ پس ہر وہ کام جو مثالِ سابق کے بغیر ایجاد کیا جائے اسے بدعت کہتے ہیں چاہے وہ بدعتِ حسنہ ہو یا بدعتِ سیئہ۔‘‘( ابن حجر عسقلانی، فتح الباری، 13 : 253)

اس سے دونوں میں فرق واضح ہوجاتا ہے کہ ’’مجرب‘‘  کو دین کا ثابت شدہ حصہ نہیں سجھاجاتا،جب کہ ’’بدعت‘‘  کو دین کا ثابت شدہ حصہ اور لازم سمجھ کرکیاجاتا ہے، اگرکسی مجرب کو بھی لازم یا دین کا حصہ سمجھ کر کیا جانے لگے تو اسے بھی بدعت کہا جائے گا اور اس  کا ترک بھی واجب ہوگا۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008201462

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے