بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 21 ستمبر 2019 ء

دارالافتاء

 

لڑکے کے عقیقہ میں ایک بکرا بھی ذبح کرسکتے ہیں


سوال

 کیا بیٹے کی پیدائش پر عقیقہ کے لیے دو کی بجائے ایک بکرا یا بڑے جانور میں ایک حصہ کیا جا سکتا ہے؟ شرعی عقیقہ ہو جائے گا؟ میرے دو جڑواں بچے ہوئے ہیں، کیا ان کے عقیقے کے لیے ان کی طرف سے دو بکرے ذبح کرنا کافی ہوگا؟

جواب

لڑکے کی ولادت پر اگر استطاعت ہوتو (ہر ایک لڑکے کی طرف سے ) دوبکرے یا بکریاں ذبح کرنامستحب ہے۔  اور اگر دو کی وسعت نہ ہوتوایک کاذبح کرنابھی کافی ہے، لہذا آپ اپنے جڑواں  بچوں کی جانب سے دو بکرے بطور عقیقہ ذبح کرسکتے ہیں،اس سے عقیقہ ادا ہوجائے گا۔(کفایت المفتی 8/242)فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144010200317

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے