بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

- 17 جولائی 2019 ء

دارالافتاء

 

فیس تاخیر سے جمع کرانے پر جرمانہ


سوال

اسکول میں دیر سے فیس جمع کرانے میں مالی جرمانہ وصول کیا جاتا ہے، اکاؤنٹنٹ کا کام سب طرح کا حساب کتاب رکھنا ہوتا ہے،مالی جرمانہ وصول کرنا اور اس کا حساب رکھنا کیا اکاؤنٹنٹ کے لیے جائز ہوگا؟

جواب

اسکول کا لیٹ فیس ادا کرنے پر جرمانہ وصول کرنا شرعاً درست نہیں، لہذا اکاؤنٹنٹ کے لیے مالی جرمانہ وصول کرنا اور اس کا حساب رکھنا درست نہیں۔

"والحاصل أن المذهب عدم التعزير بأخذ المال"۔ ( كتاب الحدود، باب التعزير ۴/ ٦۱ ط: سعيد)فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 143905200035

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے