بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

13 شوال 1440ھ- 17 جون 2019 ء

دارالافتاء

 

غیر رمضان میں وتر کی جماعت کا حکم


سوال

غیررمضان میں وتر کی جماعت کا کیا حکم ہے؟

جواب

وتر کی جماعت تراویح کی جماعت کے تابع ہے؛ اس لیے یہ رمضان المبارک کے ساتھ خاص ہے،رمضان کے علاوہ وتر کی جماعت مکروہ ہے۔

حاشية رد المختار على الدر المختار (2 / 48):
"الذي يظهر أن جماعة الوتر تبع لجماعة التراويح وإن كان الوتر نفسه أصلاً في ذاته؛ لأن سنة الجماعة في الوتر إنما عرفت بالأثر تابعة للتراويح على أنهم اختلفوا في أفضلية صلاتها بالجماعة بعد التراويح كما يأتي".
الفتاوى الهندية (4 / 21):
"وَيُوتِرُ بِجَمَاعَةٍ فِي رَمَضَانَ فَقَطْ عَلَيْهِ إجْمَاعُ الْمُسْلِمِينَ، كَذَا فِي التَّبْيِينِ الْوِتْرُ فِي رَمَضَانَ بِالْجَمَاعَةِ أَفْضَلُ مِنْ أَدَائِهَا فِي مَنْزِلِهِ وَهُوَ الصَّحِيحُ ، هَكَذَا فِي السِّرَاجِ الْوَهَّاجِ".
فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144007200443

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے