بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

12 شوال 1440ھ- 16 جون 2019 ء

دارالافتاء

 

طالبِ علم بھائی کو زکاۃ دینا


سوال

کیا طالبِ علم جو چھٹیوں پر گھر آیا ہوا ہو، وہ اپنے بھائیوں سے زکاۃ  لے سکتا ہے؟ حال آں کہ وہ اس وقت طالبِ علم نہیں ہے، چھٹیوں پر ہے!

جواب

واضح رہے کہ زکاۃ  کا مستحق بننے کے لیے صرف طالبِ علم ہونا کافی نہیں ہے، بلکہ زکاۃ کا مستحق وہ فرد ہے جس کے پاس ضرورتِ اصلیہ سے زائد نصاب (یعنی ساڑھے باون تولہ چاندی یا اس کی قیمت) کے برابر مال (نقدی، سونا، چاندی، مالِ تجارت یا مخلوط مال) یا سامان موجود نہ ہو۔ 

پس مسئولہ صورت میں اگر مذکورہ شخص واقعۃً مستحقِ زکاۃ  ہو تو اسے بھائی زکاۃ  دے سکتے ہیں۔فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144008201923

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن


تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے