بِسْمِ اللَّهِ الرَّحْمَنِ الرَّحِيم

17 ذو الحجة 1440ھ- 19 اگست 2019 ء

دارالافتاء

 

جنسی خواہش کو بڑھانے والی ادویات کا استعمال


سوال

میری  شہوت بہت کم ہے، کیا میں اس کے لیے گولیاں استعمال کرسکتا ہوں؟

جواب

اللہ تعالی  نے انسان کو پیدا کیا اور اس میں دو قسم کی قوتیں  ودیعت رکھی ہے، ایک تو قوتِ ملکوتیت ہے یعنی عبادت، ذکر واذکار وغیرہ  کی قوت، اور دوسری  قوتِ بہیمیت یعنی شہوانی قوت ،  اگر قوتِ ملکوتیت  میں  ترقی کرے تو انسان کا مقام فرشتوں سے بھی بڑھ جاتا ہے، اور انسان کو پیدا کرنے کا مقصد اسی قوت میں ترقی کرنا ہے یعنی عبادت، اطاعت وغیرہ میں، جیساکہ اللہ تعالیٰ نے فرمایا:  

  {وَمَا خَلَقْتُ الْجِنَّ وَالْإِنْسَ إِلَّا لِيَعْبُدُونِ } [الذاريات: 56]

      ترجمہ: اور میں نے جن اور انسان کو اسی واسطے پیدا کیا کہ میری عبادت کیا کریں۔  (از بیان القرآن)

   اور  دوسری قوت یعنی  شہوانی  قوت کو اس لیے ودیعت رکھا ہے کہ انسان  آپس کے تعلق اور قربت پر مجبور ہو، اور اس سے نسل انسانی کا بقا ہو، اور اس کے لیے شریعت نے صرف نکاح کے طریقہ کی اجازت دی ہے، اسی طرح  اگر شرعی اعتبار سے باندی ہو تو اس سے بھی  تعلق قائم کرنے کی اجازت  دی ہے،  ان دونوں طریقوں کے علاوہ  کسی اور طریقے سے خواہشات کو پورا کرنے کی اجازت نہیں دی، اور اللہ تعالیٰ نے مرد و عورت میں اپنے فطری وطبعی  تقاضے کی تکمیل کے لیے قدرتی طور پر صلاحیت بھی پیدا کی، اور عام طور پر اس کام کے لیے انسان کو کسی اور  چیز کا محتاج نہیں بنایا، اگر کوئی اس فطری تقاضے میں اس حد تک کمی کاشکار ہو جس سے دوسرے فریق کی حق تلفی کا اندیشہ ہو تو وہ اس قوت کو معتدل حالت پر لانے کے لیے ادویات کا استعمال کرسکتا ہے، مگراس بارے میں کسی مستند معالج سے مشورہ کرلینا چاہیے۔ فقط واللہ اعلم


فتوی نمبر : 144003200397

دارالافتاء : جامعہ علوم اسلامیہ علامہ محمد یوسف بنوری ٹاؤن



تلاشں

کتب و ابواب

سوال پوچھیں

اگر آپ کا مطلوبہ سوال موجود نہیں تو اپنا سوال پوچھنے کے لیے یہاں کلک کریں، سوال بھیجنے کے بعد جواب کا انتظار کریں۔سوالات کی کثرت کی وجہ سے کبھی جواب دینے میں پندرہ بیس دن کا وقت بھی لگ جاتا ہے

سوال پوچھیں

ہماری ایپلی کیشن ڈاؤن لوڈ کرنے کے لئے